Wednesday, December 23, 2015

Gazal by Dr. Chanda Hussaini Akbar, Gulbarga.

غزل


کوئی بات دل کی سنانے سے پہلے
ذرا سوچ لو دل لگانے سے پہلے

جو تم ہو پریشاں تو پہلے بتادو
ستانے سے پہلے منانے سے پہلے

برا کام دنیا مین کوئی نہ کرنا
جہاں چھوڑ کر آپ جانے سے پہلے

ذرا تھام لو اپنے دامن کو تم بھی
سمبھل نے سے پہلے گرانے سے پہلے

فریب و مکر سے بھری کیوں ہے دنیا
خدایا بتا دے اٹھانے سے پہلے

گریباں میں پہلے خود اپنے ہی جھانکو
نظر سے کسی کو گرانے سے پہلے

کرم ہو خدایا تیرا مجھ پہ ایسا
کہ دنیا سے اکبر کے جانے سے پہلے

(ڈاکٹر چندا حسینی اکبر، گلبرگہ)

Saturday, August 22, 2015

Bharatiya Sangeet Se Sanskar

^maVr` g§JrV go g§ñH$ma

          ^maV _| g§JrV H$m ^§S>ma h¢Ÿ&  {d{dY àm§Vm| H$m {d{dY bmoH$ Z¥Ë`, bmoH$JrV, gwJ_ g§JrV, CÎma {hÝXwñVmZr g§JrV, H$Zm©Q>H$ g§JrV Am¡a {d{dY Z¥Ë`e¡br go ^maV AmoVàmoV h¢Ÿ&  XoIm OmE Vmo g§JrV _| {d{dY Jm`Ze¡br, dmXZe¡br, Z¥Ë`e¡br Am¡a KamZo ~hmoV h¡Ÿ&  g§JrV H$m CnmgH$ g§JrV Ho$ gwI Ho$ gm_Zo g§gma Ho$ H$m¡Zgo ^r ^m¡{VH$ gwI H$s Anojm Zhr H$aVm dmo {g\©$ g§JrV Ho$ _mÜ`_ go ^JdmZ Ho$ ñ_aU _| V„rZ hmo OmVm h¢Ÿ&
          AmOH$b Q>r. ìhr. Am¡a B§Q>aZoQ> Ho$ OJV _| JVrerb OrdZ _| bmoJ gƒo g§JrV H$s Va\$ CVZm Ü`mZ Zhr Xo ahoŸ&  gƒm g§JrV dh h¡Ÿ Omo {MÎm H$mo àgÞ H$a lmoVm H$mo AmZ§XrV H$a XoVm h¡Ÿ&  JVrerb OrdZ _| bmoJ g§JrV ^r em°Q>H$Q> go nmZm MmhVo h¡Ÿ&  g§JrV OëXr AmZm Am¡a OëXr ñQ>ma hmoZm MmhVo h¡Ÿ&  bo{H$Z `o hmo Zht gH$Vm Š`m|H$s, O~VH$ g§JrV grIZo Ho$ {bE g§JrV Am¡a  g§JrV Ho$ Jwé Ho$ àVr lÕm, {Zð>m, ^º$s Am¡a AmË_g_n©U H$s ^mdZm go H$R>moa gmYZm Zhr H$aVm V~ VH$ dmo g§JrV H$s AÀN>r {ejm Zhr bo gH$VmŸ&  g§JrV H$s {ejm boVo dº$ Jwé Ho$ gm_Zo ~¡R>H$a g§JrV {ejm boZr Mm{hEŸ&  g§JrV go n[adma Ho$ bmoJ, AmOy~mOy Ho$ bmoJ BZgo ~mV{MV Am¡a {dMmam| H$m AmXmZ àXmZ hmoVm h¡Ÿ&  na§Vw AmO bmoJ B§Q>aZoQ> Ho$ gm_Zo K§Q>m| ~¡R>Vo h¡Ÿ&  n[adma _| ahH$a ^r ~mVMrV Z H$aZo Ho$ H$maU n[adma _| ahH$a ^r n[adma go Xya hmo OmVo h¢Ÿ&  dmo AnZo Amn _| {h ahVo h¢Ÿ&
          AJa h_ ~ƒm| `m  ~S>m| H$mo g§JrV H$s {ejm XoVo h¢ Vmo CZ_| g~Ho$ gmW ~mV H$aZo, {dMmam| H$m AmXmZ àXmZ H$aZm Am¡a AmË_{dídmg AnZo Amn Am OmVm h¡Ÿ&  Am¡a Omo Jwé, {ejH$, ~wOwJm}§ H$mo Am¡a _m±-~mn, ^mB©, ~hZ H$mo Omo _mZ, AmXa XoZm Mm{hE dmo AnZo AnZo Amn grI boVo h¢Ÿ&  CZH$mo AbJ go {gImZo {H$ Oê$aV Zhr nS>>Vr AmOH$b ~ƒo Q>r. ìhr. XoIZo _| Am¡a B§Q>aZoQ> na Jo_ IobVo ~¡R>Zo go CZH$m {X_mJr {dH$mg H$_ hmoVm Om ahm h¢Ÿ&  Am¡a {MS>{MS>mnZ AmHo$ dmo {H$grgo ^r ~mV Zht H$aVoŸ&  dmo AnZo Amn _| {h ahVo h¢Ÿ&  Am¡a AHo$bo ahZm ng§X H$aVo h¢Ÿ&  ~ëH$s g§JrV {ejm go ~ƒmo _| EH$mJ«Vm ~T>Vr h¢Ÿ  Am¡a g§ñH$ma {_bVo h¡Ÿ&
          AmOH$b Ho$ {nŠMa _| {g\©$ bìh ñQ>moar hmoVr h¢Ÿ&  {Og_| hramo,-hramoBZ H$mo nmZo Ho$ {bE Hw$N> ^r H$aVm h¡Ÿ&  _mam_mar, {hamoBZ Ho$ N>moQ>o H$nS>m| _| goŠgr JmZo {XImVo h¢Ÿ&  Bg go ~ÀMo Š`m {gI|Jo, Š`m| H$s {nŠMa Ho$ ñQ>moar _| n[adma Am¡a _m°§-~mn, XmXm-XmXr, ZmZm-ZmZr, MmMm-MmMr, ^mB©-~hZ, ^m^r Eogo [aíVm| Ho$ ~ma| _| BZ g~ Ho$ ß`ma Ho$ ~mao _| Zht {XImVo, emXr Ho$ ~mX H¡$go ahZm, n[adma H$mo H¡$go g§^mbZm, ^JdmZ am_ Ho$ EH$nËZr, EH$ dMZ, {Z`_m| Ho$ ~mao _|, am_m`U, _hm^maV Ho$ ~mao _| Hw$N> Zhr {XImVo Vmo CZH$mo _mby_ H¡$go hmoJm, g§ñH$ma H¡$go {_b|Jo? 
          bo{H$Z h_mam ^maVr` g§JrV n«mMrZ H$mb go, am_m`mU _hm^maV H$mb go MbVm Am ahm h¡Ÿ&  ^JdmZ am_ Ho$ ^OZ H$~ra, _ram~mB© Ho$ ^OZ grIZo `m gwZZo go CZHo$ ~mao _| nVm MbVm h¡Ÿ&  g§JrV OJV Ho$ ~S>o ~S>o H$bmH$ma Omo {H$VZr H$R>moa n[al_ H$aHo$ CÀM loUr Ho$ H$bmH$ma ~Zo CÝhmoZo {H$VZr AÀN>r aMZmE± {H$E h¡Ÿ&  Bg Ho$ ~mao _| nVm MbVm h¢Ÿ&  nm°n å`w{OH$, \$mñQ> JmZo, {nŠMa Ho$ Yy_ Yy_ JmZo gwZZo H$mo AÀN> bJVm h¡Ÿ&  bo{H$Z `o ^OZ Am¡a gwJ_ g§JrV gwZZo go `m emór` g§JrV gwZZo go Am¡a ^r AÀN>m bJVm h¡Ÿ&  _mZ{gH$ VZmd Xya hmo OmVm h¡Ÿ&  _Z àgÞ hmo OmVm h¡Ÿ&  gwZ Ho$ XoIr`o Am¡a gwZmB©E Adí` ~Xbmd Am`oJmŸ&
          AmOH$b H$moB© ^r Iwer H$m _m¡H$m hmo Vmo nmQ>u H$aZm, {nZm, ImZm, {S>ñH$mo, ZmB©Q> Šb~ OmZm \°$eZ hmo J`m h¡Ÿ&  {nŠMa _| {hamo-{hamoB©Z {S—>§H$ H$aVo XoIH$a ~hþV go `wdm dJ© S—>tH$ H$aVo h¢Ÿ&  na `o ~hþV ~war ~mV h¡Ÿ&  AJa H$moB© ^r Iwer H$m _m¡H$m hmo Vmo Amn AnZo n[adma Ho$ gmW Iwer _mZB©`o, Amng _| gwI-Xw…I H$s ~mV| H$a| ~S>m| go ~mV H$aZo go Š`m AÀN>m, Š`m ~wam g_P _| AmVm h¢Ÿ&  {S>ñH$mo, ZmB©Q> Šb~ OmZo go AÀN>m {H$gr AZmW Aml_ Ho$ ~ƒm| go OmH$a {_bm| CZgo {g\©$ ~mV H$am| {H$gr d¥Õml_ _| OmH$a CZgo ~mV H$amo CZHo$ AZw^d gwZm| {\$a XoImo AmnH$mo AnZo OrdZ H$m _mob g_P _| Am`oJmŸ&  OrdZ H$moB© {nŠMa H$s ñQ>moar Zhr h¢Ÿ&  Mma {XZ XoIo Eoe H$ao N>moS> {XE Am¡a Xygam Z`m {nŠMa Am`m {\$a AmZ§X CR>m`oŸ&  _Zwî` H$m OrdZ EH$ _mo~mB©b H$s Vah h¡Ÿ&  `h eara _mo~mB©b O¡go h¡Ÿ&  Cgo ~hþV g§^mbZm nT>Vm h¡Ÿ&  {Jam Vmo Qy>Q> OmVm h¡, nmZr _|  J`m Vmo Iam~ hmo OmVm h¢Ÿ&  Cgo h_oem MmO© H$aZm nS>Vm h¢Ÿ&  Cgr Vah eara H$mo AÀN>m ImZm Am¡a AÀN>r XoI^mb H$aZm Oê$ar h¢Ÿ&  eara Ho$ g^r Ad`d ~hmoV _m¡brH$ h¢Ÿ& _Zwî` H$m OrdZ EH$ _mo~mB©b {g_ H$mS>© H$s Vah h¢Ÿ&  MmO© H$aHo$ AÀN>m ImZm, AÀN>o g§ñH$ma go AÀN>o aho Vmo AÀN>mŸ&  Zhr Vmo S—>tH$ nmQ>u H$aHo$, ~wao ì`dhma H$aHo$, emararH$ Am¡a _mZ{gH$ MmO© IV_ hmoH$a {g_ H$mS>© {ZH$mb Ho$ \|$H$ XoZo O¡go _Zwî` AnZm AZ_mob OrdZ Imo XoVm h¡Ÿ&  Vmo gmo{M`o nmíMmË` g§ñH¥$Vr _| Am¡a ^maVr` g§ñH¥$Vr _| Š`m \$aH$ h¡Ÿ&  ^maV _| Omo g§ñH¥$Vr, g§ñH$ma h¡, dmo g§gma _| H$hr na ^r Zhr {_bVmŸ&  Vmo Š`m| bmoJ nmíMmË` g§ñH¥$Vr H$mo AnZm aho h¢Ÿ&  `o {dMma H$aZo H$s ~mV h¡Ÿ&

          Bg{bE em§Vr Am¡a gX²^mdZm go ahZo Am¡a Amng _| _ob Omob ~T>mHo$ ahZo Ho$ {bE g§JrV hr g~go loð> H$bm h¡Ÿ&
Rajashri shriram rajashrishriram@gmail.com

Bharatiya Lok Sangeet

^maVr` bmoH$ g§JrV

          AmË_g_n©U H$s ^mdZm Am¡a _wº$ öX` go bmoH$g§JrV H$m àXe©Z hmoVm h¢Ÿ&  {d{^Þ àm§Vm| _o§ àmXo{eH$ g§ñH¥$Vr H$s Amdí`H$Vm Ho$ AZwgma {^Þ {^Þ Adgam| na Omo JrV JmE OmVo h¡, Cgo bmoH$ g§JrV H$hm OmVm h¢Ÿ&  bmoH$ g§JrV Ho$ g§ñH$ma`wº$ g§ñH$aU H$mo emór` g§JrV H$s g§km Xr JB© h¢Ÿ&  emór` g§JrV _| ñda, b`, Vmb Ho$ {Z`_m| Ho$ H$maU pŠbï>Vm ~T> OmZo go emór` g§JrV gm_mÝ` OZVm Ho$ {bE Aa§OH$ Am¡a Xya hmoVm Mbm J`mŸ&
          H$bmAm|H$m CÔoí` ^mdZmAm|Ho$ CËH$f© Ûmam agmZw^y{V H$mamZm h¡ `h agmZw^y{V- Z¥Ë`, JrV Am{X _| EH$mJ« hmoZo go {_bVm h¡Ÿ&  ñda, Vmb Am¡a b`, _Z Am¡a _pñVîH$ na Jham à^md N>moS>Vo h¢Ÿ&  Bg{bE g§JrV H$mo loð> H$bmAm| _| {JZm OmVm h¡Ÿ&  emór` g§JrV _| VH$ZrH$s {deofVmE± A{YH$ Am OmZo go bmoH$ g§JrV Ho$ g_mZ OZ_Z H$mo AmH${f©V H$aZo H$s j_Vm Zhr aIVmŸ&  bmoH$ g§JrV ghO J«mø hmoZo Ho$ H$maU erK«Vm go ha C_« Ho$ BÝgmZ H$mo AmH${f©V H$aVm h¡Ÿ&  OrdZ go OwS>r hþB© pñW{V`m± emXr, CËgd, Ë`m|hma, AmZ§X, Xw…I AbJ-AbJ Adga na AbJ-AbJ JrV AnZo-AnZo àm§V Ho$ bmoJ {_bH$a bmoH$ JrV JmVo h¡Ÿ&  Am¡a ag H$s dfm© H$aZo bJVo h¡Ÿ&  gab eãXmdbr àË`oH$ H$s g_P _|  Am OmVr h¡, Omo AnZo AW© go lmoVmAm| H$mo VÝ_` H$a XoVr h¡Ÿ&  bmoH$ g§JrV _| YwZ N>moQ>r hmoVr h¡Ÿ Am¡a YwZ \¡$bmd H$s H$moB© gr_m Zhr ahVrŸ&  Bg{bE bmoH$ g§JrV _Zwî` H$mo A{YH$ AmH${f©V H$aVm h¡Ÿ&  AbJ AbJ Adgam| na AbJ AbJ JrV AnZr gab ñdamdbr Am¡a eãXmdbr Ho$ H$maU BÝgmZ H$s AmË_m go OwS> OmVo h¡Ÿ&  OÝ_ go boH$a _¥Ë`w VH$ Ho$ JrV  BVZr ñdÀN>§XVmnyd©H$ àH$Q> hmoVo h¡ H$s _Zwî` AnZo g_mO Am¡a {_Å>r go AZm`mg hr OwS> OmVm h¡Ÿ&  ì`º$s Am¡a g_mO Ho$ gwI VWm Xw…I H$m à{Vq~~ bmoH$ g§JrV h¡Ÿ& 
          bmoH$ g§JrV H$m N>§X N>moQ>m hmoVm h¡, na§Vw ^md Ho$ AZwHy$b hmoZo go dh _Z-_pñVîH$ na nyam à^md S>mbVm h¡Ÿ&  ^mdm| H$s gZmVZVm Ho$ H$maU bmoH$ g§JrV H$^r nwamZm Zhr nT>Vm, dh gXm~hma h¡Ÿ&  Jm`H$ Am¡a lmoVm Ho$ ~rM grYm OwS>md hmoZo H$o H$maU ^md gåàofU H$s à{H«$`m _| bmoH$ g§JrV g~go A{YH$ gj_ h¡Ÿ&  bmoH$ g§JrV go à^m{dV hmoH$a hr adrÝÐZmW Q>¡JmoaOr Zo EH$ ZB© JmZ nÕVr H$m {Z_m©U {H$m`mŸ&
          bmoH$ g§JrV AnZr na§namJV H$bm H$mo OrdrV aIVm h¡Ÿ&  OmVr, g_wXm`, Y_©, nd© Am¡a amï—>r`Vm H$s MoVZm H$m`_ aIVo hþE bmoH$ g§JrVH$ma AnZo ^mdm| H$mo CËgmh Ho$ gmW àH$Q> H$aVo h¡Ÿ&  bmoH$ g§JrV H$s `hr àoaH$ eº$s gm_m{OH$ CËWmZ _| ghm`H$ {gÕ hmoVr h¡Ÿ&  bmoH$ g§JrV Ho$ H$bmH$ma ghO _Z go ào[aV hmoH$a g§doXZerb hmoVo h¢Ÿ&  Am¡a AnZo gwI-Xw…I ^ybH$a AmZ§X_` hmoOmVo h¡Ÿ&  `hr CgH$m _mZ{gH$ YamVb, g¥OZmË_H$ e{º$ go AmoV àmoV hmoH$a Zd ñ\y${V© Ed§ Zd ag H$m g§Mma H$aVm h¢Ÿ&  bmoH$ JrV go {d{dY àm§Vm| H$s g§ñH¥$Vr {XImB© XoVr h¡Ÿ&  Omo {d{dY àm§Vm| H$mo EH${ÌV H$aHo$ AnZo AnZo g§ñH¥$Vr H$m àXe©Z H$aVr h¢Ÿ&
          bmoH$ g§JrV _| T>mobH$ Ho$ JrV, àm§Vm| _| àM{bV JrV, Jmdm| _| {deof CËgdm| na JmEo OmZo dmbo JrV Amëhm, ^OZ, {\$ë_r JrV, JPb, H$ìdmbr, XmXam, hmoar, {~ahm, ~mah_mgm Am{X AZoH$ àH$ma Ho$ JrV Am OmVo h¡Ÿ&  d¡go hr {_Om©nya _| H$Oar, _madmS> _| _m§S>, nydu CÎma _| {~Xo{g`m, {~hþbm Am{X ~hþV àMma _| h¡§Ÿ&
          AmO Ohm°§ ha Va\$ nmíMmË` g§JrV \¡$bVm Om ahm h¡, dhm°§ h_mam bmoH$ g§JrV bwá hmoVm Om ahm h¢Ÿ&  na§Vw AmO ^r Eogo H$bmH$ma h¡Ÿ, Omo AnZr bmoH$ g§ñH¥$Vr H$mo g§°Omo`o aIo hþEo h¢ CZH$mo AnZr bmoH$ YyZm| Ho$ AmJo {dXoer YwZm| H$m H$VB© à^md Zhr nS>Vm h¡Ÿ&
          _m± H$s __Vm, _¥Ë`w H$m {demX, XrZ H$s H$éUm, B©î`m©, amJ-Ûof, C„mg, H$m_Zm H«$moY, Ah_² , _X, bmo^, _moh, Amem, {Zamem, g^r H$m {X½Xe©Z bmoH$ g§JrV _| ghOVm go hmoVm h¢Ÿ&  AnZo Bg ^md  nj H$s àYmZVm Ho$ H$maU bmoH$ g§JrV nyao g§gma _| bmoH${à` h¢Ÿ&
Rajashri shriram rajashrishriram@gmail.com

Sangeet Samaroh, Ek Prerna,

g§JrV g_mamoh- EH$ àoaUm

          AZoH$ ~S>o H$bmH$ma, CñVmX AnZr gmYZm, ~wÕr H$m¡eë`, Am¡a Z`m à`moJ H$aHo$ g§JrV g_mamoh _| lmoVm H$m {MÎm àgÞ  H$aHo$ Cgo _§Ì_w½Y H$a XoVm h¡Ÿ&  lmoVm BZ ~S>o H$bmH$mam| H$mo _§M na XoI gH$Vm h¡Ÿ, gwZ gH$Vm h¡, OmZ gH$Vm h¡, Am¡a {gI gH$Vm h¢Ÿ&
          àmMrZ H$mb _| g§JrV amOm Ho$ aOdmS>m| _| Am¡a {H$bo _| àX{e©V hmoVo WoŸ&  amOm Ho$ gm_Zo H$bmH$ma AnZr H$bm àXe©Z H$aVo WoŸ&  gmYmaU OZVm H$m Cƒ g§JrV gwZZo Am¡a {gIZo H$m gmYZ CnbãY Zhr WmŸ&  ^maV H$mo ñdV§ÌVm àmá hmoZo Ho$ ~mX H$bmH$ma amÁ`m| H$s gr_mE± bm±KH$a OZVm Ho$ ~rM Am JE Am¡a _§M àXe©Z Ho$ _mÜ`_ go AnZr H$bm H$m àXe©Z H$aZo bJoŸ&  OZVm Zo H$bmH$mam| H$mo XoIm, gwZm, Am¡a Jm`Z, gamoX, drUm, {gVma, ehZmB©, dm°`{bZ, V~bm VWm Z¥Ë` B. na Jm`Z, dmXZ Am¡a Z¥Ë` na ^maVr` g§JrV H$m {H$VmZ à^mdembr àXe©Z {H$`m Om gH$Vm h¡ Bgo OmZmŸ&
          `h H$bmH$mam| H$m g§JrV àXe©Z XoIH$a bmoJ h¡aV _| Am JEŸ&  Am¡a g§JrV grIZo {H$ àoaUm {_b J`rŸ&  Eogm bJm O¡go ^maV hr Zhr ~ëH$s ^maVr` g§JrV AmOmX hþAm h¡Ÿ&  H$bH$Îmm, _w§~B©«, _Ðmg, {X„r, dmaUmgr, B. ZJam| _| {Z`{_V ê$n go g§JrV Ho$ AIrb ^maVr` H$m`©H«$_ Am`moOrV hmoZo bJoŸ&  àmMrZ g§JrV emóm| H$m àH$meZ hþAm Am¡a g§JrV H$m {ejU XoZodmbo ñHy$bm| _| hOmam| {dÚmWu àdoe boZo bJoŸ&  emñÌr` g§JrV Ho$ {ejU hoVw g§JrV Ho$ àW_ {dÚmb` H$s ñWmnZm ~S>moXm _| gZ² 1886 _| _hmamOm g`mOramd Jm`H$dmS> Ho$ Ûmam hþB©Ÿ&  CgHo$ ~mX AZoH$ g§JrV {dÚmb` ApñVËd _| Am`oŸ&  gZ² 1916 _| ~S>moXam _| A{Ib ^maVr` ñVa H$m gd© àW_ g§JrV gå_obZ Am`mo{OV hþAmŸ&  Bg n[afX _| Xoe ^a Ho$ JwUrOZ, {dÛmZ, g§JrVk, g§JrV ào_r, amOm-_hmamOmAm| Ed§ a{gH$ OZVm Zo ^mJ {b`mŸ&  Bg H$m g§MmbZ g§JrV OJV Ho$ g_W© {dÛmZ n§ {dîUw Zmam`U ^mVIÊS>o Zo {H$`m WmŸ&
          _§M àXe©Z Zo g_mO mm¡a lmoVmAm| _| OmJéH$Vm AmB© VWm emór` g§JrV H$mo ^maVr` g§ñH¥$Vr H$m Jm¡ad g_Pm OmZo bJmŸ&  g§JrV g_mamoh go H$mbmH$mam| H$mo AnZr H$bm àXe©Z H$m Am¡a OZVm H$mo g§JrV {gIZo H$s àoaUm {_b J`r ^maV _| g§JrVH$mam| H$mo g~go nhbo AmH$medmUr Zo hr _§M àXmZ {H$`mŸ&  H$bmH$mam| H$m ÜdZr narjU H$aHo$ lo{U`m± {ZYm©[aV H$aHo$ H$m`©H«$_ XoZo bJoŸ&  Bggo H$bmH$mam| _| H$bm Ho$ àVr CËgmh OmJ¥V hþAmŸ&  AmH$medmUr Am¡a XyaXe©Z Ho$ _mÜ`_ go AZoH$ H$m`©H«$_ àgm[aV hmoZo bJoŸ&  Bg Ho$ Abmdm g§JrV Am¡a Z¥Ë` Ho$ nmR>, g§JrV nÌrH$m, g§JrV n[agådmX, g§JrV àVr`moJrVm, nmíMmË` g§JrV, amï—>r` dmÚd¥ÝX, d¥ÝXJmZ, {MÌnQ> g§JrV VWm àdmgr ^maVr`m| Ho$ {bE {d{dYa§Jr AZoH$ H$m`©H«$_ lmoVm Am¡a Xe©H$m|H$m _Z _mohZ H$aZo bJoŸ&
          g§JrV Ûmam g_mO H$m Mm[a{ÌH$ CËWmZ hmoVm h¢Ÿ&  g§JrV Am¡a g_mO H$m K{Zð> gå~ÝY h¡Ÿ&  ^maVr` emór` g§JrV {dXoem| _| ^r ~hmoV bmoH${à` h¡Ÿ& {dXoem| _| ^r ^maVr` emñÌr` g§JrV Ho$ H$m`©H«$_ hmoVo§ h¢Ÿ&  ½dm{b`a H$m VmZgoZ g§JrV g_mamoh, nyZm H$m gdmB© J§Yd© g§JrV g_mamoh, Y¥nX _obm, {Z_mS> CËgd `o g^r g§JrV g_mamoh, gå_obZ, Am¡a H$m`©H«$_ go g§JrV H$mo AmJo ~T>Zo H$s àoaUm {_bVr h¢Ÿ&

ormal style='text-align:justify;line-height:150%'>          »`mb Jm`H$s, Rw>_ar, Q>ßnm, JPb, hmoar O¡go e¥§Jm[aH$ _Yya agnyU© Jm`Z Ho$ gmW V~bo H$s g§JV, {gVma, drUm, ~m°§gyar, ObVa§J, O¡go dmXZ gmW ^r V~bo H$s g§JV ~hþV Cn`moJr h¢Ÿ&  V~bo H$s ZmOwH$ Am¡a _Yya AmdmO dmXZ _| ag Am¡a gm¢X`© {Z_m©U H$aVm h¢Ÿ, Am¡a lmoVm H$mo _§Ì_w½Y H$a XoVm h¢Ÿ&  Bg{bE CËVa ^maVr` g§JrV _| V~bm à_wI VmbdmÚ h¢Ÿ&

Rajashri shriram rajashrishriram@gmail.com

Talwadhya Tabla

VmbdmÚ V~bm

          CËVa ^maV Ho$ g§JrV H$m g~go A{YH$ bmoH${à` Am¡a àM{bV VmbdmÚ V~bm h¡Ÿ&  g^r Jm`Z àH$ma _|, gw{fa dmÚ, V§Vy dmÚ Am¡a Z¥Ë` Ho$ g§JV _| ^r V~bm _hËdnyU© dmÚ ~Z J`m h¡Ÿ&  nIdmO, T>mobH$, Zmb, O¡go AdZÜX dmÚm| Ho$ g^r JwU V~bm _| h¢Ÿ&
          14 dr gXr go CÎma ^maV H$s Jm`Z e¡br _| »`mb Jm`Z e¡br àmaå^ hmo J`rŸ&  »`mb Ed§ Rw>_ar e¥§Jm[aH$ Ed§ _Yya  Jm`Ze¡br h¡ BZHo$ gmW g§JV Ho$ {bE nIdmg Ho$ J§^ra ~mob `m ÜdZr Cn`moJr Zht WoŸ&  {H$gr AÝ` dmÚ H$s Amdí`H$Vm nS>Zo bJr Am¡a V^r V~bm dmÚ H$m OÝ_ Am¡a {dH$mg hmo J`mŸ&  `h `wJ V~bo Ho$ {bE {deof _hËd H$m h¡Ÿ&  V~bo H$s CËnÎmr Ho$ ~mao _| AZoH$ _V àM{bV h¡Ÿ&  ^JdmZ e§H$a Ho$ hmW H$m S>_ê$ H$m n[adV©Z V~bm g_Pm OmVm h¡Ÿ&  Hw$N> bmoJm| H$m _V h¡ {H$ _m± gañdVr H$m drUm Am¡a JUnVr H$m _¥X§J {à` dmÚ h¡Ÿ&  _¥X§J H$m hr V~bm dmÚ _| n[adV©Z hmo J`mŸ&  _hmamï—> H$m gå~b Zm_H$ dmÚ Xw¸$S> Zm_H$ dmÚ H$m n[aîH¥$V ê$n V~bm ~VmVo h¡Ÿ&  ^aV Ho$ ZmQ>çemñÌ _| {ÌnyîH$a dmÚ H$m C„oI h¢  CgH$m n[adV©Z V~bm hmo J`mŸ&  V~bo H$m àMma Am¡a àgma _| C. {gÕmaIm± H$m ~hmoV ~S>m `moJXmZ h¡Ÿ&  CÝhmoZo nIdmO H$s dmXZe¡br _| na{dV©Z H$aHo$ Cgo V~bo na ~OmZo `mo½` ~Zm`m,  Bgr go V~bm _m¡{bH$ ê$n _| gm_Zo Am`mŸ&
          AmO g§JrV H$m joÌ ~hþV {dñV¥V hmo J`m h¡Ÿ&  g§JrV gå_obZ, g^m`o, AmH$medmUr, XyaXe©Z Ed§ {d{^Þ àH$ma H$s [aH$m{S>ªJ nÕ{V`m| Ho$ H$maU g§JrV OZ_mZg _| ì`má hmo J`mŸ&  àË`oH$ g§JrV  _h{\$b V~bm Ho$ {~Zm AYyam h¡Ÿ&  V~bm emór` g§JrV , gwJ_ g§JrV, Z¥Ë` Ho$ gmW g§JV {bE Am¡a gmobmo V~bm dmXZ Ho$ {bE ^r ~hþV àM{bV h¡Ÿ&  AZoH$ Cƒ V~bm dmXH$ H$mo ^maV gaH$ma Zo nÙlr, nÙ{d^yfU nwañH$ma XoH$a V~bm dmXZ H$mo ~T>mdm {X`m h¡Ÿ&  Jm`Z Am¡a Z¥Ë` Ho$ gmW ~hþV gmao ~ƒo V~bm grI aho h¢Ÿ&  Omo Jm`Z dmXZ Am¡a Z¥Ë` go g§JrV ~ZVm h¡Ÿ&  `hr g§JrV ^maVr` g§ñH¥$Vr H$s Yamoha h¡Ÿ& 

          V~bm dmXZ _| dmXZ e¡br AbJ hmoZo Ho$ H$maU ~mO Am¡a KamZmo§ H$m {Z_m©U hmo J`mŸ&  V~bo Ho$ à_wI Xmo ~mO h¢Ÿ&  nya~ ~mO Am¡a npíM_ ~mO Am¡a V~bo Ho$ à_wI N>… KamZo h¡Ÿ&  {Xëbr, AOamS>m, bIZm¡, \$éIm~mX, ~Zmag Am¡a n§Om~ KamZm àË`oH$ KamZo H$s dmXZ e¡br AbJ h¡Ÿ&  na§Vy AmYw{ZH$ `wJ _| dmXH$ {H$gr EH$ KamZo VH$ Ho$ dmXZ VH$ {g_rV Z ahH$a g^r KamZm| H$m dmXZ H$aZo H$m à`mg H$a ahm h¢Ÿ&
          n§ AZmoIobmb H$m Zm Yr§ Yt Zm, CñVmX Ah_XOmZ {WaH$dm H$m am¡, n§ {H$eZ _hmamO H$m ñVwVr naZ, C. {ZOm_wÔrZ Im± H$s bp½J`m±, `o g^r AmO ^r ~hmoV bmoH${à` h¡Ÿ&  AmYw{ZH$ H$mb _| C. A„maIm± Am¡a Pm{H$a hþgoZ Ho$ V~bo na ZdrZVm à`moJ dmXZ ~hmoV bmoH${à` h¡Ÿ&  V~bm dmXZ _| nwéfm| Ho$ gmW _{hbm H$bmH$ma O¡go AZwamYm nmb, [a¨nm {edm O¡go H$bmH$ma Cƒ loUr Ho$ V~bm dm{XH$mE°§ h¢Ÿ&
          »`mb Jm`H$s, Rw>_ar, Q>ßnm, JPb, hmoar O¡go e¥§Jm[aH$ _Yya agnyU© Jm`Z Ho$ gmW V~bo H$s g§JV, {gVma, drUm, ~m°§gyar, ObVa§J, O¡go dmXZ gmW ^r V~bo H$s g§JV ~hþV Cn`moJr h¢Ÿ&  V~bo H$s ZmOwH$ Am¡a _Yya AmdmO dmXZ _| ag Am¡a gm¢X`© {Z_m©U H$aVm h¢Ÿ, Am¡a lmoVm H$mo _§Ì_w½Y H$a XoVm h¢Ÿ&  Bg{bE CËVa ^maVr` g§JrV _| V~bm à_wI VmbdmÚ h¢Ÿ&
Rajashri shriram rajashrishriram@gmail.com

Manav Jeevan Main Sangeet Ka Mahatv, Importance of Music in Human Live

_mZd OrdZ _| g§JrV H$m _hËd

          g^r  b{bV H$bm _| g§JrV gd©loð> H$bm h¡Ÿ&  _mZd OrdZ g§JrV go AmoVàmoV h¡Ÿ&  _mZd H$mo g§JrV go {deof AmZÝX àmá hmoVm h¡Ÿ&
          _mZd Ho$ OrdZ _| AmZ§X, gwI-Xw…I, qMVm, ì`Wm Am¡a g_ñ`m `o g^r AmVo OmVo ahVo h¡Ÿ&  BZ g^r _| _mZd H$mo pñWaVm Am¡a em§Vr g§JrV go àmá hmo OmVm h¡ Vmo _Z H$mo emÝV H$a geº$ ~ZmZo H$s j_Vm EH$_mÌ g§JrV  _| h¢Ÿ&
          {eey Ho$ OÝ_ go CgHo$ _¥Ë`w VH$ dmo g§JrV Ho$ gmW ahVm h¡Ÿ&  _m± H$s bmoar gwZH$a ~mbH$ H$m gmoZm, _Zwî` H$m MbZm, CR>Zm `hm± VH$ H$s _Zwî` Ho$ gm§°g boZo _| ^r EH$ b` h¡Ÿ&  n¥Ïdr H$m n[a^«_U, G$Vy MH«$, gw`m}X`-gy`m©ñV  _Vb~ {XZ-amV BZ g^r _| b` h¡Ÿ&  KS>r H$m MbZm, gmB©{H$b MbmZm, JmS>r MbmZm `o g^r EH$ b` _| MbVr h¡Ÿ&
          g§JrV go _Z H$mo AmZ§X Vmo {_bVm h¡Ÿ&  gmWhr ÜdZr`m± _mZ{gH$ pñWVr`m| H$s ^r gyMH$ hmoVr h¡Ÿ&  `o h_mao _mZmo^mdm| H$mo ^r à^m{dV H$aVr h¢Ÿ&  Omo _Zwî` g§JrV gmYZm _| {ZaÝVa {ZaV ahVm h¡, Cgo gm§gm[aH$ àn§Mgo Hw$N> ^r gå~ÝY Zht ahVmŸ&  g§JrV _| BVZm ~S>m AmH$f©U h¢ {H$ CgHo$ gm_Zo g§gma H$s  ~S>r go ~S>r dñVy ^r {\$H$s nS>  OmVr h¡Ÿ&  gm§gm[aH$ {df`m|go Omo gwI {_bVm h¡, Cggo H$ht A{YH$ gwI g§JrV go àmá hmoVm h¡Ÿ&
          g§JrV h_mar AmË_m _| ^{º$_` AZw^y{V`m± ^a XoVr h¡Ÿ&  ^º$s ^r EH$ àH$ma H$m AmdoJ h¡Ÿ&  Omo h_mar AmË_m H$mo à^m{dV H$aVr h¡Ÿ&  amJ Am¡a b` _| à^m{dV H$aZo H$s e{º$ CZH$s {Z`{_VVm Ho$ H$maU hr AmVr h¡§Ÿ&  Š`m|{H$ Ag§VwbZ H$mo g§VwbZ, Aì`dñWm _| ì`dñW m Am¡a Agm_§Oñ` _| gm_§Oñ` bmZo H$s Anojm {Z`{_VVm `m g§`_ go h_ A{YH$ à^m{dV hmoVmo h¡Ÿ&  ñda Am¡a b` g§`_ VWm gm_§Oñ` go h_| à^m{dV H$aVm h¢Ÿ&  {H$gr AÀN>o H$bmH$ma H$m g§JrV gwZZo g^r lmoVm EH${ÌV hmoH$a g§JrV H$m AmZ§X CR>mVo h¢Ÿ&  Bggo g_mO gwì`dpñWV Ed§ gwg§JR>rV hmoVm h¡Ÿ&  {Oggo AmZodmbr {nT>r H$mo AÀN>o g§ñH$ma {_bVo h¢Ÿ& 
          g§JrV ^º$s H$m na_ _mJ© h¢Ÿ& g§JrV gmYZ H$m Ma_ bú` hr _moj h¡Ÿ&  _wº$s H$s àmár hmoVr h¡Ÿ&  dh AÝV…H$aU H$mo n{dÌ ~ZmH$a AkmZ Ho$ AmdaU H$mo ^§J H$a XoVm h¡ Am¡a V~ AmË_kmZ H$s àmár hmo OmVr h¡ g§JrV gmYH$ _wº$ hmo OmVm h¡Ÿ&  Bg àH$ma g§JrV _Zwî` Ho$ gdmª{JU OrdZ H$mo ñne© H$aVm h¡Ÿ&
Rajashri shriram rajashrishriram@gmail.com

Friday, May 15, 2015

جناب رشید جاوید کے سانحہ ارتحال پر مجلس شعور ادب کی جانب سے اظہار تعزیت

            گلبرگہ ۷۱ مئی(راست) سید عارف مرشد ؔشریک معتمد وشعبہ نشرواشاعت مجلس شعور ادب گلبرگہ کی اطلاع کے بموجب شہر گلبرگہ کی نامور و قدآور شخصیت کے سانحہ ارتحال پر مجلس شعور ادب گلبرگہ کے تمام عہدیداران اپنے شدید رنج وغم کا اظہار کرتے ہیں اور شہر گلبرگہ میں ویسے ہی علمی و ادبی اور اسطرح کی فعال و حرکیاتی شخصیتوں کا فقدان رہاہے۔ ان حالات میں جناب رشید جاوید صاحب کا انتقال ایک دل ہلادینے والا سانحہ ہے۔ مرحوم کی علمی خدمات ناقابل فراموش رہیں۔ مجلس شعور ادب گلبرگہ اس سانحہ پر اپنے رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے پسماندگان کو صبروجمیل اور مرحوم کو اللہ اپنی جوار رحمت میں جگہ عطا کرے ....آمین۔

Tuesday, May 12, 2015

GUIDE LINES FOR “UMRAH” (Step by Step)

GUIDE LINES FOR “UMRAH”
(Step by Step)

Ihraam: Two piece of unstitched white (preferably) clothes (2 ½ meters each) Take Bath (With the niyyat of Ihraam) and perform “Wadu”.
            Put on Ihraam, perform two Rak-at Nifil Namaz for “UMRAH”. Take care if it is a prohibited (Makrooh) time.

Niyyat Namaz-e-Umrah:-
            Doo rak-at nafil namaz baraye Umrah ada Karne ki niyyat karta hoon waste Allah ke monh mera taraf Baith Allah ke. Cover head by Ihraam, only during the Namaz.
            During above namaz, preferably recite sura Kafiroon after, Sura Fatiha during first rak-at, and during Second rak-at after Sura Fatiha Sura Iqlaas may be recited. If one does’t remember said Suras, other suraas may be recited.

Thursday, March 26, 2015

Gazal by Ateeq Ajmal Wazeer, Gulbarga

          غزل
           سید عتیق اجمل وزیر
                                                                                            موبائل 9036847503


نہیں چاہیے سو نے کی بھی کان مجھے
تجھ کو پانے کا ہے فقط ارمان مجھے

ادا ہے اسکی یہ بھی اک شرمانے کی
دیکھ کے جو وہ ہو تا ہے انجان مجھے

Monday, March 23, 2015

افسانہ : شرارتی : سیف قاضی

شرارتی


اُس کی شرارتوں سے سب عاجز تھے چاہے گھر والے ہوں محلے کے لوگ یا رشتے دار ،وہ کسی کے ساتھ رعایت نہ رتتا تھا۔اُس کی شرارتوں ہی نے اسے پورے محلے میں مشہور کیا ہوا تھا۔اکثر لوگ اس کا نام سنتے ہی منہ بنا لیتے اور اکثر کے چہروں پر مسکراہٹ آ جاتی۔اکثر کے منہ سے بے اختیار برے الفاظ اس کے لئے نکل جاتے۔
وہ اپنی ماں کا اکلوتا بیٹا تھا جب سے ہوش سنبھالا تھا اپنی ماں اور اس کے رشتے داروں ہی کو دیکھا تھا۔باپ اس کے پیدا ہوتے ہی ماں کو چھوڑ گئے تھے کیوں ؟ یہ راز آج تک کسی کو پتہ نہ تھا ،اور شاید اس کی حرکتوں کا کارن بھی یہ ہی بات تھی۔کیونکہ لوگوں کی اُلٹی سیدھی باتوں کا اس کے پاس کوئی جواب نہ تھا ،اور نہ ہی ابھی سمجھ اتنی تھی کہ ایسی باتوں پر توجہ دے۔لہذا وہ اپنی حرکتوں سے اپنا غبار نکالتا۔

اُس نے آنکھ کھولتے ہی اپنی ماں کو محنت کرتے دیکھا تھا۔ان کی ایک کپڑوں کی دوکان تھی جس میں عورتوں اور بچوں کے سلے سلائے کپڑے ملتے تھے اُ ن کی دوکان صدر کے علاقے میں تھی۔اس کی نانی ان کے ساتھ رہتی تھیں جس کی وجہ سے انہیں کھانے پکانے کا پرابلم نہیں تھا۔وہ اسکول جاتا واپسی پر نانی کھانا کھلاتیں اور اسے ہوم ورک کرنے کے لئے کہتیں اور خود کیونکہ تھک جاتی تھیں اس لئے بیچاری لیٹتے ہی سو جاتیں ،اور یہ ہی اس کے لئے سنہرا وقت ہوتا وہ چپکے سے گھر سے باہر نکلتا۔
کسی گھر کی کنڈی باہر سے بند کر دیتا۔کسی کی کیاری کھود ڈالتا۔کسی گھر پر چاک سے چار سو بیس لکھ دیتا۔کسی کا دروازہ کھٹ کھٹا کر بھاگ جاتا۔آدھے گھنٹے میں وہ یہ سارے کام نمٹا کر گھر آ جاتا اور نانی کے اُٹھنے سے پہلے پہلے گھر واپس آ کر کام کرنے بیٹھ جاتا۔
جب لوگ شکایتیں لے کر آتے تو نانی بیچاری معصومیت سے قس میں کھا کھا کر کہتیں کہ وہ گھر میں تھا اور اسکول کا کام کر رہا تھا۔اور یہ خود معصوم صورت بنائے بیٹھا رہتا۔اور دل ہی دل میں قہقہے لگاتا۔کبھی کبھی اسے نانی پر ترس بھی آتا مگر بہت کم۔
ماں اسے بہت سمجھاتی جب اس پر کوئی اثر نہ ہوتا تو رونے لگتی اسے ماں سے ہمدردی ہوتی مگر بس تھوڑی دیر اور پھر باپ کی کمی ماں کی ہمدردی پر حاوی ہو جاتی ،اور لوگوں کے الٹے سیدھے سوال اس کے کانوں میں گونجنے لگتے۔
سب سے عجیب بات یہ تھی وہ پڑھائی میں بہت اچھا تھا اسکول سے کبھی اس کی کوئی شکایت نہیں آئی تھی۔اور یہ ہی بات اس کی ماں اور نانی کے لئے اطمینان کا باعث تھی۔
اسی طرح شکایتیں سنتے شرارتیں کرتے اور پٹتے اس نے پرائمری اسکول ختم کیا اور سیکنڈری اسکول میں آ گیا وہ اب بھی شرارتیں کرتا مگر اب اس کی شرارتیں بھی بڑی ہو گئیں تھیں۔اب وہ ایک گھر کی کندی میں دھاگہ باندھتا اس کو دو تین دفعہ کھٹکھٹاتا اور دھاگہ سامنے والے گھر میں پھینک کر خود اپنے گھر آ جاتا ،اُن دونوں گھروں میں لڑائی ہو جاتی اور یہ گھر میں بیٹھ کر ہنستا رہتا۔
نانی اب کافی ضعیف ہو گئیں تھیں۔اس لئے انہوں نے ایک ماسی برتن دھونے کے لئے رکھ لی تھی ،شام کے وقت ماسی برتن دھونے آتی وہ برتن دھو کر اُٹھتی تو یہ پلاسٹک ی چھپکلی اس مہارت سے رکھتا کہ وہ سچ مُچ کی چھپکلی سمجھ کر چیخ چیخ کر سارا گھر سر پر اُٹھا لیتی اور یہ ایسا بن جاتا جیسے کچھ پتہ ہی نہیں۔ماں کو پتہ چلتا وہ بہت سمجھاتی کہ کسی دن بہت بڑا وبال کھڑا ہو جائے گا۔ وہ وعدہ کرتا کہ آئندہ ایسا نہیں کرے گا مگر دو دن بھی اپنی بات پر قائم نہ رہ پاتا۔
اُن کے کسی رشتے دار کی شادی تھی یہ لوگ وہاں جا رہے تھے۔شادی میں کھانے کا بھی انتظام تھا۔کھا نے میں صرف ایک ڈش کی اجازت تھی اس لئے زیادہ تر لوگ بریانی اور رائتہ یا دہی رکھتے تھے اور ایک میٹھی ڈش ہوتی تھی۔ٹیبلز پر کھانا رکھا جا رہا تھا دو ٹیبلز پر اس نے ویٹر سے کہہ کر دہی کے کونڈوں کی جگہ کھیر کے کونڈے رکھوا دئے۔اور لوگوں نے بریانی میں کھیر ڈال لی ،مارے شرمندگی کے کچھ نے تو اسی طرح کھایا اور کچھ نے پلیٹیں چھوڑ دیں۔جب ویٹرز پر ڈانٹ پڑی تو وہ اس لڑکے کو ڈھونڈھتے ہی رہ گئے۔
ایک دفعہ اس کی کوئی رشتے دار ان کے گھر ایک دن ٹھہر کر اگلے دن دوسرے شہر جانے والی تھیں ان کا گھر کیونکہ ٹرین اسٹیشن کے قریب تھا اس لئے وہ ایک دن ان کے پاس رہ کر اگلے شہر جانے والی تھیں وہ ان کے گھر پہنچیں سب ملنے ملانے میں لگے اسے موقعہ ملا اس نے ان کے دونوں سوٹ کیس سب سے نظر بچا کر اسٹور میں رکھ دئے۔جب سب لوگ ذرا اطمینان سے بیٹھے تو انہوں نے اپنا سامان دیکھا تو دو سوٹ کیس غائب۔اب تو وہ بڑی پریشان ہوئیں ماں اور نانی بھی حیران کہ سامان کہاں گیا ایک ہنگامہ مچ گیا سب کمرے میں برآمدے میں سب جگہ دیکھ لیا باہر بھی دیکھ آئے سوٹ کیس کہیں نظر نہ آئے سب حیران ماں کو ایک دم اس کا خیال آیا جا کر کان پکڑ لیا اس نے اپنی لا علمی کا اظہار کیا مگر ماں نے سب کے سامنے مارنے کی دھمکی دی تو اس نے بتایا کہ اس نے وہ سوٹ کیس اسٹور میں رکھ دئے ہیں۔
دوسرے دن اُن لوگوں کے جانے کے بعد ماں نے پھر سمجھایا کہ خدا را اپنی شرارتوں سے باز آ جاؤ ورنہ کسی دن بہت برا پھنسو گے۔وہ خاموش سنتا رہا پھر اُٹھ کر باہر چل دیا۔اُسے لوگوں کو اس طرح پریشان کر کے تسکین ملتی تھی۔اور اُن باتوں کا جواب جو لوگ اس کے باپ کے بارے میں پوچھتے تھے۔جو وہ ماں اور نانی سے شیئر نہیں کر سکتا تھا۔
وہ گھر سے باہر نکلا ہاتھ میں پرکار تھا۔برابر کے گھر والوں کے یہاں ایک گدھا گاڑی کھڑی تھی جس پر سیمنٹ کے بلاک رکھے تھے جو مزدور اُٹھا اُٹھا کر گھر کے اندر لے جا رہا تھا اور گدھا گاڑی کا مالک دروازے کے قریب کھڑا چائے پی رہا تھا۔اس کی رگِ شرارت پھڑکی اور اس نے گدھے کے قریب سے گزرتے ہوئے ہاتھ میں پکڑا ہوا پرکار گدھے کے چبھا دیا گدھا ایک دم چیختا ہوا بھاگا اس کے پیچھے پیچھے گدھا گاڑی کا مالک اور مزدور بھی حیران پریشان بھاگے۔بڑی مشکل سے گدھے کو قابو کیا اور ایک دوسرے سے اس کے بھاگنے کی وجہ پوچھتے رہے اور یہ چپ چاپ گھر واپس آ گیا۔
اس نے میٹرک بڑی اچھی پوزیشن سے پاس کیا پورے صوبے میں سیکنڈ آیا تھا اس لئے اسے وظیفہ دیا گیا۔ماں اور نانی بہت خوش تھیں وہ خود بھی خوش تھا اور کسی بہت اچھے کالج میں داخلہ لینا چاہتا تھا جو اب اس کے لئے مشکل نہ تھا اس نے اپنے شہر کے سب سے اچھے کالج میں داخلہ لیا اور پڑھائی میں پورے تن من دھن سے لگ گیا۔ نانی بہت بوڑھی ہو گئیں تھیں اور ماں بھی تیزی سے بڑھاپے کی طرف رواں دواں تھیں۔مگر وہ اپنے بیٹے کو بہت بڑا آدمی دیکھنا چاہتی تھیں ،اس لئے کبھی اس کے سامنے اپنی کسی تکلیف کا ذکر نہ کرتی تھیں تاکہ وہ سکون سے پڑھ سکے۔اب اسے شرارتوں کا وقت کم ملتا مگر جب بھی ملتا وہ اسے ضائع نہ کرتا۔
محلے میں شادی تھی یہ لوگ بھی مدعو تھے یہ بھی ماں اور نانی کے ساتھ شریک تھا۔اسے شرارت سوجھی اور ایک پرچی پر یہ لکھ کر مولانا صاحب کو دے آیا کہ ،آپ کے چہرے پر کالک لگی ہے۔مولانا صاحب نے پرچی پڑھی اور اس کے بعد بیچارے پورا وقت اپنا چہرہ پونچھتے رہے کہ ان کا چہرہ سرخ ہو گیا سب مولانا صاحب کی بے چینی اور اس حرکت پر حیران تھے بڑی مشکل سے بیچاروں نے نکاح پڑھایا۔اور نکاح پڑھاتے ہی بھاگ نکلے اور یہ ہنس ہنس کر لوٹ پوٹ ہو گیا۔
اس نے اپنی تعلیم مکمل کی اور ایک اچھا آرکیٹکٹ بن گیا۔ماں کے بھی دن تھوڑے آسان ہو گئے۔مگر انہوں نے اپنا کاروبار نہیں چھوڑا۔اب اس کی شرارتیں بھی اس کی طرح میچور ہو گئیں تھیں۔لیکن چھوٹی نہیں تھیں۔پھر اس کی زندگی میں ایک لڑکی آئی۔وہ اس کے آفس ہی میں کام کرتی تھی آہستہ آہستہ دونوں ایک دوسرے کے قریب آ گئے اب ماں بھی اور نانی بھی اس کی شادی کرنا چاہتی تھیں جب ماں نے اپنی خواہش اس کے سامنے رکھی تو اس نے ماں کو اپنی دوست کے بارے میں بتایا۔ماں نے کوئی اعتراض نہ کیا اور اس لڑکی کے ماں باپ سے ملنے کی خواہش ظاہر کی اس نے ماں سے وعدہ کیا کہ جلد ہی وہ اس کی ملاقات کرائے گا۔
سب لوگ آپس میں ملے اور ان دونوں کا رشتہ طے ہو گیا۔اب دونوں اور بھی قریب آ گئے وہ خود بھی اپنی پسند پر بہت خوش اور مطمئن تھا ،سب سے زیادہ خوش اس لئے تھا کہ اسے اس کی پسند مل رہی تھی۔ماں نے خواہش ظاہر کی کہ پہلے منگنی کر دیں پھر شادی کریں گے وہ لوگ تیار ہو گئے۔منگنی کے چار ماہ بعد شادی کی تاریخ رکھی گئی۔دن تیزی سے گزر گئے۔
شادی سے دو دن پہلے اس کی رگِ شرارت پھڑکی اور اس نے ایک لمبی چوڑی جہیز کی لسٹ بنا کر لڑکی والوں کو بھیج دی۔وہ سارے بڑے حیران ہوئے خاص کر لڑکی کے باپ کو بہت غصہ آیا انہوں نے اس کے گھر فون کیا ماں نے لا علمی کا اظہار کیا اور انہیں اپنے بیٹے کی شرارتی طبیعت سے بھی آگاہ کیا مگر وہ اتنے شدید ناراض ہو گئے کہ کچھ سننے کو تیار نہ ہوئے۔ماں بہت پریشان ہوئی نانی کا بھی برا حال تھا جب یہ گھر آیا تو ماں نے سارا قصہ سنا یا وہ خوب ہنسا مگر یہ شرارت اسے بہت مہنگی پڑی اس لڑکی نے شادی ہی سے انکار کر دیا کیونکہ اس کے باپ کو ہارٹ اٹیک ہو گیا تھا وہ اسپتال میں تھے اور اس طرح اسے یہ شرارت نہ صرف مہنگی پڑی بلکہ بہت ہی مہنگی پڑی نانی بھی اس سے بالکل خفا ہو گئیں۔اور ماں بھی بالکل خاموش ہو گئیں۔آج پہلی دفعہ اسے اپنی شرارتوں پر غصہ آیا اور اس نے سنجیدہ ہو جانے کا عہد کر لیا۔
وہ ماں کے پاس آیا اور اس نے ماں کے سامنے عہد کیا کہ اب وہ بالکل سنجیدہ ہو جائے گا۔ماں کا دل اندر سے بہت دکھا مگر وہ خاموش رہیں اس نے اپنی شادی کا اختیار بھی ماں اور نانی کو دے دیا۔
ماں نے اس کے لئے ایک لڑکی تلاش کی اور اس کی شادی کر دی۔
یہ وہ کہانی تھی جو اس نے اپنی بیوی کو سنائی تھی کیونکہ وہ اس کی سنجیدہ طبیعت سے اکثر ہراساں ہو جاتی۔
اس کی بیوی نے مجھے بتایا کہ اس کے شوہر کی زندگی میں باپ کی کمی نے ایسی محرومی پیدا کر دی تھی جو وہ ہر طرح دوسروں کو ستا کر نکالنا چاہتا تھا کیونکہ باپ کے نہ ہونے کا صحیح جواب اس کے پاس نہیں تھا۔اس نے اپنی بیوی سے بھی وعدہ لیا تھا کہ وہ کتنا ہی اس سے ناراض ہو مگر علیحدہ ہر گز نہ ہو گی۔کیونکہ مرنے کے علاوہ بچوں کی زندگی میں ماں باپ کی محرومی بڑی ظالم ہوتی ہے۔اور جب انہیں اس کمی کے بارے میں کچھ علم بھی نہ ہو۔
اسکی بیوی نے اس سے ہمدردی کا اظہار کیا تھا اور وعدہ بھی لیا تھا کہ وہ ہلکی پھلکی شرارتیں کرتا رہے گا ،کیونکہ زندگی کا لطف ہی ہلکے پھلکے ماحول میں ہے اور اگر ایک دوسرے کی کمزوریوں کو سمجھ کر ساتھ دیا جائے تو زندگی بہت خوبصورت ہو جاتی ہے۔مجھے اس کی بات بہت ہی اچھی اور حقیقت سے قریب لگی۔ وہ دونوں بہت خوش ہیں ماں اور نانی بھی مطمئن ہیں۔لیکن اسے اپنے آپ کو روکنے کے لئے بڑا صبر کرنا پڑتا ہے
اس کی بیوی نے مجھے بتایا کہ اس سے نکاح کے وقت کسی بات پر جب اس کے والد نے ٹوکا تو کہنے لگا ،انکل پہلی شادی ہے اس لئے دوسری میں بالکل ٹھیک بولوں گا ‘‘ وہ بیچارے اس کا منہ دیکھتے رہ گئے۔لیکن کیونکہ اس کی والدہ اس کی طبیعت کے بارے میں بتا چکی تھیں اس لئے انہوں نے برا نہیں مانا۔
اس کی باتیں سن کر مجھے بہت اچھا لگا۔واقعی اگر کمزوریوں کو سمجھ کر ایک دوسرے کا ساتھ دیا جائے تو زندگی گزارنا بہت آسان ہو جاتی ہے۔بیوی میں اگر صلاحیت اور سمجھ ہو اور شوہر اس کا ساتھ دے تو بہت کچھ بدل سکتا ہے کہ یہ بندھن ہر حالت نبھانے کے لئے ہوتا ہے۔
ساتھ ہی مجھے احساس ہوا کہ کمی کیسی بھی ہو انسان کے اوپر اچھائی یا برائی کی صورت میں ضرور اثر انداز ہوتی ہے۔مصلحت کا تقاضہ یہ ہے کہ جب بچے سمجھنے کے قابل ہو جائیں تو ان کی زندگی میں اگر خدانخواستہ ایسی کوئی کمی ہو جس پر بڑوں کا اختیار نہیں تھا تو ان کو اچھے پیرائے میں ضرور آگاہ کر دینا چاہئے تاکہ اس کے منفی اثرات کم سے کم ہوں اور وہ کسی ایک کو موردِ الزام نہ سمجھیں اور نہ ہی اپنی زندگی میں تلخیاں پیدا کریں۔کیونکہ زیادہ تر لوگ منفی رویوں کا شکار ہو جاتے ہیں۔
خوش قسمت ہوتے ہیں وہ جنہیں ایسے جیون ساتھی میسر آ جائیں جو ان کی ذہنی اذیت کو سمجھ لیں اور ان کا ساتھ خلوص سے دیں تو زندگی آسان اور خوبصورت ہو جاتی ہے۔ساتھی وہ ہی ہیں جو ایک دوسرے کو تمام تر اچھائیوں اور تمام تر برائیوں کے ساتھ قبول کریں اور ہر کمزور لمحے میں ایک دوسرے کا ساتھ دیں کہ کمزوریوں سے عاری تو کوئی بھی نہیں۔جو لوگ یہ نکتہ سمجھ لیتے ہیں۔وہ ہر سخت سے سخت وقت کا مقابلہ کر لیتے ہیں کہ انہیں اپنی کمزوریوں کا بھی ادراک ہوتا ہے۔اور یہ ادراک ہی شادی شدہ زندگی کی کامیابی کی ضمانت ہوتا ہے۔
سیف قاضی
ماخذ:
بزم اردو لائبریری

٭٭٭


Saturday, March 21, 2015

Afsana "Kashmakash" افسانہ کشمکش


”  کشمکش

صبح ایک عجیب سی بے چینی محسوس ہورہی تھی سوچا....چلوالطاف کو فون کر لیتے ہیں۔
ہلو!
آوازآئی اسلام علیکم!
سلام کا جواب دیئے بغیر ہم نے سوالات داغ دیے۔....اور.... آج کا کیا پروگرام ہے۔ رفیق کے رشتہ کا کیا ہواکہیں کوئی بات بنی یا نہیں۔
الطاف : نہیں صاب آج گاؤںجانا ہے۔

 کیوں؟
الطاف: تمہیں پتہ نہیں؟
نہیں تو!
الطاف : اجی صاب وہ گانوں کے نانی کا انتقال ہوا ہے۔
ارے وہ گاؤں والے نانی کا؟
الطاف : ہاں وہی....
کب؟
الطاف : شایدآج صبح ہی، کچھ ٹھیک سے بتایا نہیںانہوں نے جلدی میں تھے۔
تو تم جارہے ہو؟
الطاف : ہاںمیں تو جاؤںگا اور جنت کو بھی لے جاوں گا۔
توٹھیک ہے میں بھی آؤنگا۔ اسی بہانے سارے نئے پرانے رشتہ داروں سے ملاقات ہوگی؟
چلو اللہ حافظ!
            اللہ حافظ!
            فون کٹ گیا........
            اب دماغ میں دھندلی یادیں پرانے خیالات تازہ ہونے لگیں۔ ہاں وہ یادیں تو بہت دھندلی تھیں۔ کیونکہ وہ تھی تقریباً 30 سال پرانی یادیں۔ تو ہم ان یادوں پر پڑی دھول صاف کرکے اپنے آپ کو کبھی اپنی نانی کے کچے مکان میں تو کبھی کھیت میں پاتے۔ نانا پستہ قد سفید کرتا پاجامہ میں ملبوس موٹ چلارہے ہیں۔ موٹ کا پانی ٹھنڈا اور میٹھا بڑاہی مزے دار ہوتا ہے۔ پانی کے نالے سے گوللر بہہ کر آرہے ہیں میں اور میرا چھوٹا بھائی الطاف ان گوللروں کو جمع کرتے اور کچھ کھاتے تو کچھ باولی کے حوالے کرتے۔ ادھر ادھر کی باتیں کرتے (شاید پاگل باتیں) کبھی ننگے تو کبھی ادھ ننگے باولی میں غوطے لگاتے۔ پھر اوپر آتے ۔ کھیت میں بیر کے درخت بہت پرانے تھے لیکن اس کے بیر بڑے میٹھے تھے ۔کھیت سے تھوڑی دور ریل کی پٹریاں تھیں۔ ہم نے کبھی ریل نہیںدیکھی تھی ، پٹریوں پر کھڑے گھنٹوں ریل کا انتظار کرتے لیکن کبھی ریل نظر نہیں آتی۔ پٹریوں کے بازو ایک قدیم عمارت تھی۔ شاید کوئی سرکاری عمارت تھی۔ اس کے رنگ سے پتہ چلتا تھاکہ یہ کوئی سرکاری عمارت ہے۔ کھڑکی کے اندر نظر ڈالتے اور پتھر مارتے کیوں کہ اندر بہت سارے پتھر پہلے سے موجود تھے۔ کچھ تاش کے پتے ،سگریٹ کی ڈبیاں ، ماچس کی جلی تیلیاں، بہت سارا کچرا اندر کمروں میں بکھرا ہواتھا۔ شاید یہ عمارت سالوں سے بند تھی۔
            گاؤں جانے کاہم نے ذہن بنایا اور گھر سے نکلے ، بس اسٹانڈ کے راستے میں ہمارے تجارت منڈی ہے۔ کچھ ضروری کام نپٹایا۔ پھرٹھیک ۲ بجے بس اسٹینڈ کے طرف روانہ ہوئے۔ اس حساب سے کہ یہاں سے گاؤں جانے کیلئے ۲ گھنٹے درکار ہیں۔ اور میت کا وقت بعد عصر مقرر تھا۔
            بس اسٹینڈ پہنچتے ہی دیکھا کہ بس ہمارا ہی انتظار کررہی ہے۔ بس تقریباًپوری طرح بھری ہوئی تھی ایکا دُکا سیٹیں خالی تھیں۔ بالکل سامنے ایک مکمل سیٹ خالی تھی۔لوگ اکثر آگے والی سیٹ پر بیٹھنے سے ڈرتے ہیں، ہم یہ شعر گنگناتے سیٹ کی جانب بڑھے

لوگ ہر موڑ پے رک رک کے سمبھلتے کیوں ہیں
اتنا ڈرتے ہیں تو پھر گھر سے نکلتے کیوں ہیں

            ہم کھڑکی جانب بیٹھ گئے اور فون پر دوسرے رشتہ داروں کو نانی کے گذرجانے کی اطلاع دیتے رہے ۔ بس نکلنے کو ہی تھی کہ ایک صاحب معہ اہلیہ بس میں داخل ہوئے پوری بس کا جائزہ لینے کے بعدوہ ہمار ی طرف موڑے اور ہم سے سیٹ خالی کرنے کی گذارش کی کہا کہ صاحب لیڈیز ہے اگر آپ دوسری سیٹ پر بیٹھیں تو ہم دونوں اس سیٹ پر بیٹھیں گے۔ ہم نے نفی میں سرہلایا۔کچھ زبان سے کہہ نہیں پائے کیوں کہ ہم پہلے ہی فون میں مصروف تھے۔ وہ موصوف معہ اہلیہ سامنے والی کھڑی سیٹ پر بیٹھ گئے۔ ہمیں فون سے فارغ ہوتے ہی دھوپ اور پیاس کی شدت محسوس ہوئی۔ بوتل اٹھائی اور تھوڑا پانی پیا۔ خیال آیا کہ دھوپ تو کڑی ہے۔ اور گاؤں جاتے وقت دھو پ کدھر کی ہوگی۔ ہم بس کے دائیں جانب تھے۔ دماغ پر کافی زور دینے پر پتہ چلا کہ گاؤں جاتے وقت اگر شام کا وقت ہو تو سورج بھی دائیں جانب ہوتاہے۔ ہم اپنی سیٹھ سے اٹھے اور وہ مذکورہ صاحب کو اپنی سیٹھ دے دی اور ہم بائیں جانب کی سیٹ پر جا بیٹھے۔ خدا خدا کر کے ادھا راستہ کٹنے تک ۲ گھنٹے نکل گئے۔ اب اگلے سفر کیلئے ہمیں بس بدلناتھا۔
            درمیان میں ایک گاؤں میں بس اسٹانڈ پر بس کا انتظار کررہے تھے کہ الطاف کا فون آیا۔
الطاف :   کہاںہیں ابھی آپ؟
            بھائی ابھی فلاں گاؤں میں ہوں!
الطاف:   ارے جلدی آو بھائی میت گھر سے نکالی گئی ہے اور مسجد کی جانب جارہے ہیں۔آپ جلدی آنے کی کوشش کیجئے؟
            ہم نے دریافت کیا کہ کونسی سی مسجد لے جارہے ہیں؟
الطاف :   وہ قلعے کے بغل والی ۔عصر کی نماز میں ملائیں گے۔
            میں نے دریافت کیا کہ عصر کی نماز کا وقت کیا ہے۔
            کہا .... پانچ ، سواپانچ، یعنی ۵ بجے اذان اور سواپانچ یعنی جماعت (عصر کی نماز)پھر نماز جنازہ ادا کی جائے گی۔
            توٹھیک ہے ابھی ایک گھنٹارہ گیا ہے۔ ہم پہنچ جائیں گے ۔
           
            گاؤں کی ایک بس آ لگی، ہم نے کنڈکٹر سے پتہ کیا کہ یہ بس لیٹ تو نہیں ہے۔
کنڈکٹر :   نہیں صاحب ۰۱ منٹ میں چلے گی۔ اب ہمارے پاس دوسرا کوئی چارا بھی نہیں تھا، ہم اس بس میں ہو لئے۔
            درمیان میں ہر دس پندھرامنٹ میں الطاف کا فون آتا وہ ہم سے ہماری کرنٹ پوزیشن معلوم کرتا۔ابھی کہاں ہو، ابھی کہاں، کتنا وقت لگے جلدی کرو۔
            بس ہر چھوٹے بڑے دیہات میں رکتی اور کئی مسافر بس میں چڑھتے اترتے، پھر بس دھیرے دھیرے گاؤں کی
طرف روانہ ہوتی۔

            ہم نے کنڈکٹر کے مزاج اور مذہب کا اندازہ لگالیا کہ وہ کیسے مزاج اورکس مذہب کا ہے۔وہ مسلمان معلوم ہورہاتھا۔ ہم نے کنڈکٹر سے کہا کہ بھائی بس بس اسٹانڈ سے تھوڑا پہلے روک دو ہم کو ایک میت میںجانا ہے۔پلیز
            کنڈکٹر نے اوپر سے نیچے تک ہمارا جائزہ لیا اور کہا کونسی مسجد میں ہے میت؟
            ہم نے کہا:قلعہ کے بازو والی ۔
کنڈکٹر : وہاں جماعت سوا پانچ بجے ہے ۔آرام سے جاسکتے ہو کوئی بات نہیں میت مل جائے گی۔ ایسے درمیان میںبس کو نہیں روکا جاسکتا لوگ باتیں کریںگے ، پہلے جیسا نہیں ہے۔
            بس اسٹانڈ کے قریب کافی بھیڑ تھی اور بس تھوڑا آہستہ چل رہے تھی۔ کنڈکٹرنے ہمیں چلتی بس سے کود نے کو کہا اور ہم کود گئے۔ مسجد کی جانب بھاگنے لگے۔ مسجد سے قریب ایک ہوٹل میں میرے ایک بچپن کے دوست اور ماموزاد دونوں سروں پر دستی باندھے بیٹھے نظرآئے۔ ہم نے پہلے ان سے سلام علیک کی خیریت لی اور مسجد کی جانب چل پڑے۔ مسجد میں داخل ہوئے عصر کی جماعت کا وقت ہوچلاتھا لو گ صفیں درست کررہے تھے۔ ہم وضو خانہ گئے ضروریات سے فارغ ہوئے ،ضوع بنانے تک ایک دو رکعاتیں ہو چکی تھی۔ ہمارے ماموزاد مسجد کے باہر کھڑے دکھائی دئے ہم بھی ان کے ساتھ نماز ختم ہونے کا انتظار کرتے کھڑے رہے۔
            اچانک دو عورتیں روتی ہوئی مسجد کی جانب آئیں ایک صاحب نے ان سے مسجد کے بازو دیوار سے کھڑے رہنے کو کہا۔ وہ دونوں عورتیں باہر جنازے کی نماز ختم ہونے کا انتظار کرنے لگیں تاکہ میت کا دیدارکیاجائے۔
            نانی چوں کے 90 سے اوپر عمر گذار چکی تھی، دوست احباب، سگے سنمبندھی، ناتی پوتی ،گویاکہ بہت بڑا خاندان رکھتی تھیں۔آخری دیددار کیلئے تمام چاہنے والے پہنچ چکے تھے۔ کچھ گھرپر ، کچھ مسجدمیں ، کچھ قبرستان میں، جگہ جگہ مردوخواتین میت کا انتظار کررہے تھے۔
            ہماری نظر قلعہ پر پڑھی، میںنے میرے ماموزاد سے دریافت کیا کہ اس قلعہ کی اتنی اونچی اونچی دیواروں کے درمیان آخر ہے کیا۔ ایک نے کہا چلو چل کر دیکھتے ہیں۔ ہاتھ کنگن کو آرسی کیا۔
            ہم تینوں قلعہ کے صدردروازے سے اندر چلے گئے۔ پوراقلعہ ایک کھنڈر میں تبدیل ہوچکا تھا۔ لیکن ایک مکان نما عمارت قلعہ میں نئی معلوم ہورہی تھی۔ بناوٹ ایک مکان کی طرح تھی۔ لیکن اوپر دولوڈاسپیکر لگے تھے۔ میرا خیال مسجد کی طرف گیا۔ ہاں یاد آیا قلعہ کے اُس جانب سے ایک چھوٹا دروازہ اور بھی ہے ۔ جس کے اندر ایک مندر ہے بچپن میں ہم اس مندر کے اندر سے ہوتے ہوئے مسجد میں داخل ہوتے تھے۔
            سل فون کی گھنٹی بجی ہم نے فون رسیو کیا، وہ ہمارے چھوٹے بھائی کا سعودی سے تھا۔ وہ زیادہ باتونی ہے۔ جب بھی فون کرتا ہے ۔ دوتین سوال ایک ساتھ کردیتاہے۔
ہم نے فون اٹھایا ، کہا ....ہاں کون،
            کہا: اسلام علیکم اور خیریت سے؟
            ہم نے کہا ہم گاؤں میں ہیں نانی کا انتقال ہوا ہے۔
            کہا: انا للہِ واناالیی راجعون! توایک اور بزرگ ہمارے سر سے اٹھ گیا۔
            میں میت میں ہوں بعد میں بات کریں گے۔
            ٹھیک ہے اللہ حافظ۔
            قلع سے باہر آئے دیکھا کہ جنازے کی نماز کی تیاری ہورہی ہے۔
میں نے دونوں ساتھیوں سے کہا چلو جنازے کی نماز تیار ہے۔ انہوں نے کہا کہ تم ہو آؤہم یہیں انتظار کریں گے۔

            ٹھیک ہے ہم باوضوتھے دوڑتے دوڑتے جنازے کی نماز میں شامل ہوگئے۔
            لوگ آہستہ آہستہ مسجد سے باہر آرہے تھے۔
            کسی نے آواز لگائی .... کیا تمام لوگ مسجد کے باہر آگئے؟
            ایک نے جواب دیا.... ہاں ....
            اب مولوی صاحب مسجد کے گیٹ میں رک گئے۔ اور جنازے کی نماز کی اہمیت ،جنازے کی نماز کے طریقے سنانے لگے۔ ہم کنفیوز ہورہے تھے کہ ہم جنازے کی نماز میں ہیں یا عید کی نماز میں۔ کیوں کہ اس سے پہلے ہم نے کبھی کسی مولوی کو جنازے کی نماز کا طریقہ جنازے کی نماز میں بتاتے نہیں دیکھا۔ ہم بچپن میںوالد مرحو و مغفور کے ساتھ عید گاہ جاتے تو خطیب صاحب ایک ایک کر کے پوری نماز کا طریقہ لوگوں کو سمجھاتے ، کب کیا پڑھا جائے تمام پڑھ کر سناتے۔
            ٹھیک اسی طرح مولوی صاحب نے پوری جنازے کی نماز کا طریقہ معہ سنت و نوافیل سناڈالا۔ یہاں تک تو خیرٹھیک تھا لیکن مولوی صاحب نے مزید کہا کہ .... نہلانے اور کفنانے کے بعد میت کی صورت دیکھنے کی ایک غلط روایت چل پڑی ہے ایسا نہیں کرنا چاہئے ۔اس کی وجہ انہوں نے یہ بتائی کہ میت کے آخرت کے حالات اس کی شکل پر ابھی سے نمایاں ہوتے ہیں۔ اگرمیت اچھی ہے تو لوگ اس کی تعریف کریں گے۔کہیں گے کہ چہرے پہ نور آیا ہے۔ تعریف کرنا اچھا ہوتاہے۔ تعریف کرنے سے میت کے گناہ معاف ہوتے ہیں۔ اور اگر میت کا چہرہ کالا پڑھ گیاہے۔ تو لوگ ڈر جائیں گے لیکن پھر بھی تعریف کرنا چاہئے۔ کیوں کہ تعریف کرنے سے میت کے گناہ معاف ہوتے ہیں۔
مولوی صاحب کے گول گول باتیں ہماری سمجھ میں نہیں آرہی تھیں۔ کب کونسی چیز کو اچھا کہہ رہے ہیں اور کس کوبرا....

            ہمارے ذہن میں تو ندافاضلی کا ایک شعر گردش کرہاتھا

کبھی کبھی یوں بھی ہم نے اپنے جی کو بہلایا ہے
جن باتوں کو خود نہیں سمجھے اوروں کوسمجھایا ہے

            تقریباً آدھے گھنٹے کی تقریر کے بعدنماز جنازہ ہوئی ۔ جلوسِ جنازہ قبرستان کی جانب روانہ ہوا۔ دوعورتیں جو مسجد کی دیوار سے لگ کر کھڑی تھی۔وہ میت کا چہرا دیکھنے کی خواہاں تھی۔ چونکہ مولوی صاحب کی ابھی ابھی تقریر ختم ہوئی ہے کسی نے کچھ کہنے کی ہمت نہیں کی۔
             جنازہ مسجد سے سڑک پرآیا توایک نوجوان نے زور زور سے لاالہ اللہ والحمداللہ اللہ اکبر کے نعرے بلند کرنے لگا ۔ کچھ لوگ گھبرا کر ادھر اُدھر دیکھنے لگے۔ کچھ اس کے پیچھے زور سے کچھ دبی آواز میں تو کچھ دل میں ان کلیمات کو دہرانے لگے۔راستہ خراب تھا جنازا کبھی راستے کے دائیں ہوتا تو کبھی بائیں ۔ مختلف نالیاں گڈھے ،کیچڑ ،پھلانگتے ہوئے کسی طرح میت کو قبرستان پہنچایا گیا۔
            قبر تیار تھی۔ چند نوجوانوں نے جنازے کو سیدھے قبر کے بغل کی دوسری قبر پر رکھا۔
            قبرستان پر کافی مرد وخواتین میت کے دیدار کیلئے انتظار میں تھے۔ کسی نے کہا کہ بھائی ہم میت کے آخری کا دیدار کرنا چاہتے ہیں۔چند نوجوانوں نے آواز لگائی ۔ نہیں ابھی مولوی صاحب نے کیا کہا نہیں سنا؟ نہیں دکھائیں گے۔ کسی کو نہیں دکھائیں گے۔ یہ میت عورت کی ہے۔ یہاں بہت سارے غیر حضرات بھی موجود ہیں۔ ہم میت کا چہرہ نہیںدکھائیں گے۔ ویسے بھی کفنانے کے بعد میت کا چہرا نہیں دکھایا جاتا۔ اب یہ میت ہماری نہیں یہ اللہ کی ملکیت ہے۔
            ہم نے ہماری نانی کو کبھی برقہ اڑھے کبھی کسی سے پردہ کرتے نہیں دیکھا تھا۔وہ صرف ایک سفید چادر، یا شال اُڑھتی تھی، ہم پریشان ہوگئے وہ تو سب کیلئے ایک بوڑھی نانی تھی، نانی ....سب کی نانی۔ یہ سب اثر مویوی صاحب کی تقریر کا تھا۔ ایک نوجوان بڑی تیزی دکھارہاتھا۔ شوز پہنادوسری قبروں کو اپنے پیروں تلے روندتا اپنے پینٹ کو ٹخنوں کے اوپر چڑھایے لوگوںکے ساتھ بڑی بدتمیزی سے پیش آرہاتھا۔
            اچانک ایک بزرگ آگ بگولہ ہوگئے انہوں نے آواز لگائی جن کا سر اور ڈاڑھی پوری طرح سے سفید ہوچکی تھی،تعلیم یافتہ شخص معلوم ہورہے تھے۔ ارے میاں تم ابھی بچے ہو کیا بدتمیزی کررہے ہو۔ بات کرنے کی بھی تمیز نہیں ہے تمہیں، پہلے بات کرنا سیکھو ۔ابھی دودھ کے دانت نہیں گرے ہیں تمہارے۔ یہاں چار مسلک ہیں ، ہرمسلک کے لوگ یہاں پر موجود ہیں۔ سب کے مطابق چلنا ہوگا۔

            ایک نوجوان نے آواز لگائی ارے میاں دیکھنے دو ورنہ زندگی بھر ہم سے شکایت کرتے رہیں گے کہ قبرستان پر جانے پر بھی آخری دیدار نہیں کرایئے۔

            شاید یہ گھریلوسیاست سے ڈررہاتھا۔ گھر جاکر دوسروں کو کیا جواب دے گا۔ لوگوں کے مختلف سوالات رہیں گے۔ کہ تونے فلاںفلاں وجہ سے ہم سے یہ بدلا لیا ہے وغیرہ وغیرہ

            ہم تو اس چیخ پکار سے دور جا کھڑے ہوئے۔ ہم کو تو ان مولوی اوراس بزرگ حضرت سے زیادہ وہ شاعر صحیح معلوم ہورہاتھا جس نے کہاتھا کہ

سچ بڑھے یا کہ گھٹے سچ نہ رہے
جھوٹ کی تو کوئی انتہا ہی نہیں

            اب کہیں چار تو کہیں چالیس ........

                                                                                                             سید عارف مرشد