Saturday, February 28, 2015

ہم کو گردش حالات پہ رونا آیا A Gazal by Saifuddin Saif

ہم کو تو گردشِ حالات پہ رونا آیا
رونے والے تجھے کس بات پہ رونا آیا

کیسے جیتے ہیں یہ، کس طرح جیے جاتے ہیں
اہل دل کی بسر اوقات پہ رونا آیا

جی نہیں آپ سے کیا شکایت ہو گی
ہاں مجھے تلخیِ حالات پہ رونا آیا

حسنِ مغرور کا یہ رنگ بھی دیکھا آخر
آخر اُن کو بھی کسی بات پہ رونا آیا

کیسے مر مر کے گزاری ہے تمہیں کیا معلُوم
رات بھر تاروں بھری رات پہ رونا آیا

کتنے بیتاب تھے رم جھم میں پئیں گے لیکن
آئی برسات تو برسات پہ رونا آیا

حسن نے اپنی جفاؤں پہ بہائے آنسو
عشق کو اپنی شکایات پہ رونا آیا

کتنے انجان ہیں کیا سادگی سے پوچھتے ہیں
کہیے کیا میری کسی بات پہ رونا آیا

اوّل اوّل تو بس ایک آہ نکل جاتی تھی
آخر آخر تو ملاقات پہ رونا آیا

سیف یہ دن تو قیامت کی طرح گزرا ہے
جانے کیا بات تھی، ہر بات پہ رونا آیا

 سیف الدین سیف

No comments:

Post a Comment