Saturday, March 14, 2015

Gazal by Dr. S. Chanda Hussaini Akbar, Gulbarga

غزل


  اسے ہے شوق فقط بجلیاں گرانے کا
  مرابھی عزم نئے آشیاں بنانے کا

 جہاں ہے کام اسےمیرا دل دکھانے کا
 وہیں پہ ذوق بڑھا مجھ کو مسکرانے کا

یقیں ہے سب کو یہاں اس کے کارخانے پر
 اسی کا کام بنانے کا پھر مٹانے کا

قدم قدم پہ جہاں دنیا لوٹی جاتی ہے
 ملے گا کیسے صلہ یوں ہی گنگنانے کا


  یہ دور جورو جفا مکروفریب کا اکبرؔ
 ملے گا اجر بھلا کس کے کام آنے کا


No comments:

Post a Comment