Sunday, March 1, 2015

Gazal by Hassan Mehmood, Gulbarga 09844604101

غزل

Hassan Mehmood, Gulbarga
09844604101


زندگی تجھ سے گلہ کچھ بھی نہیں

اک ترے غم کے سوا کچھ بھی نہیں


دُشمنوں سے تو ہوا کچھ بھی نہیں

دوستوں سے بھی ملاکچھ بھی نہیں


جان دے کر بھی دیا کچھ بھی نہیں

مجھ میں تھا اِس کے سوا کچھ بھی نہیں


ہار پر اُس کو گلہ کچھ بھی نہیں

جیت کر مجھ کو ملا کچھ بھی نہیں






عمر بھر کی نیند ساری اُس کے نام

میری آنکھوں کو ملا کچھ بھی نہیں


رات دن گذرے ہوں جسکے ایکساں

سانس کا پھر سلسلہ کچھ بھی نہیں


دینے والا دے رہا ہے خوب تر

میرے ہونٹوں پر دعا کچھ بھی نہیں


آندھی اور طوفان سارے ہیچ ہیں

سامنے اُسکے چلا کچھ بھی نہیں


کامیابی کیا بھلا اُس کو ملے

وقت پر جس نے کےا کچھ بھی نہیں


وقت کی تیرہ فضا میں دور تک

روشنی کا سلسلہ کچھ بھی نہیں


ڈھونڈتا ہے کیوں سکوں کو جابجا

اِس خرابے میں ملا کچھ بھی نہیں


روز جیتے ہیں یہاں مر مر کے جو

سامنے اُن کے قضا کچھ بھی نہیں


قیس سے پوچھا جنوں کیا چیز ہے

مسکرایا بس کہا کچھ بھی نہیں


..........................



No comments:

Post a Comment