Thursday, January 23, 2020

غزل صابر شاہ آبادی


غزل




عظمتِ شوق پر حرف آنے نہ دو
 آگیا دورِ سود وزیاں دوستو
جان سے بڑھ کے دل کی حفاظت
کرو عقل ہونے لگی ہے جواں دوستو
حُسن کی کوئی حد، حدِ آخر نہیں
 اس کے الطاف ہیں بے کراں دوستو
وصل ہی جس کی لے دے کے معراج ہو
 ذوق اس کا مکمل کہاں دوستو
اللہ اللہ رندودں کیافسردگی
میکدے کی فضا کتنی بے کیف تھی
وہ تبسم بھری آنکھ کیا اُٹھ گئی
 ٹوٹ پڑنے لگی کہکشاں دوستو
آنکھ ملتے ہی دل کا سکوں مٹ گیا
ان سے مل کر ہمیں اور کیا مل سکا
اس طرف حسرتیں ، اس طرف غفلتیں
جان سی چیز ہے درمیاں دوستو
دل پہ ہیرے جو بارِ وفا رکھ دیا
 پھول پر اس نے سنگِ گراں رکھ دیا
جاں بلب کر کے میرا تماشہ کیا
 حُسن یوں ہی نہیں مہربا ں دوستو
نسبتِ حُسن صابر جوان سے نہ تھی
 میرے احساس میں ہو ش مندی نہ تھی
ہا ں مگر جب کوئی دل کو تکنے لگا
 چونک کر رہ گیا ناگہاں دوستو

صابر شاہ آبادی

No comments:

Post a Comment