Thursday, January 23, 2020

غزل صابر شاہ آبادی


غزل 
کتنے گوشے میں جہاں اب بھی خزاں چھائی ہے
فصلِ گُل سارے گلستاں میں کہاں آئی ہے
خالی ساغر نہ دکھا تشنہ دیرینہ ہوں
میری رسوائی میں اک دور کی رسوائی ہے
آپ ہی کہیے کہ لفظوں میں کہاں ممکن ہے
اس تبسم میں جو تفصیلِ شناسائی ہے
حرم ودیر کی تحقیق چلی ہے جب سے
دیکھ ساقی ، تری دہلیز بھی گھبرائی ہے
طلب مئے کا سلیقہ ہمیں کیوں کر آئے
ہاتھ پھیلانے کی نوبت تو ابھی آئی ہے
رات نازاں تھی بہت اپنے اندھیروں پہ مگر
ذہنِ انساں نظر آیا ہے ،تو شر مائی ہے
شامِ اقرار و ہ معصومئی باہم صابر
واقعہ یہ ہے کہ دونوں کو حیاآئی ہے


صابر شاہ آبادی

No comments:

Post a Comment