Sunday, April 12, 2020

غزل از ✒ *ذکی قاضی گلبرگہ*

💧💧💧💧💧💧💧💧💧

                     *غزل*


مجھے چھوڑ  کر تو گیا ہے کہاں
مرے چارہ گر  اے مرے مہرباں

کہوں کیا تیرے بن مرے رازداں
سفر زندگی کا لگے ہے گراں

کسے میں سناٶں  بتا تو  یہاں
دلِ مضطرب کی مری داستاں

ہے جاری فقط دل سے آہ و فغاں
دباٶں میں کیسے بتا سسکیاں

تری یاد لے لے کہ انگڑاٸیاں
مجھے صرف دیتی ہیں  بیتابیاں

دسمبر کی کہتی ہیں تنہاٸیاں
کسی سے نہ لے یوں خدا  امتحاں

نہ ہو جس کا جگ میں کوٸ پاسباں
فقط اس کو ملتی ہیں بدنامیاں

عجب دل میں اٹھتے ہیں وہم و گماں
عطا ہو تجھے رب کی حفظ و اماں

محبت ہو سینہ میں جن کے نہاں
انہیں چاہتے ہیں ، زمیں ، آسماں

اگر دل میں پیدا ہو وہم و گماں
محبت کا مٹتا ہے نام و نشاں

مرا صرف تم سے تھا روشن جہاں
چلے آٶ اب تم مرے ہم زباں

ذکی اور کیا کیا کرے اب بیاں
ستاتی ہیں شب بھر اسے  دوریاں


    ✒ *ذکی قاضی گلبرگہ*

💧💧💧💧💧💧💧💧💧

No comments:

Post a Comment