Tuesday, May 12, 2020

ڈاکٹر مشتاق احمد دربھنگہ۔۔۔ نظم اعتراف جنوں

This is my twentieth poem of this lockdown, entitled "Aiteraf-e-Junoon" . Please stay at home and 
stay safe.


نظم ۔۔۔اعتراف جنوں !
شہر در شہر ہے بے چراغاں 
بے بس و بے بہرہ ہے انساں 
رقص کناں موت کی زندہ تصویریں 
محو حیرت ہے یہ سارا جہاں 
بیداد غم کی کوئی تدبیر نہیں 
یہ وبا کیسی کہ دوا پذیر نہیں 
ہر طرف رکا رکا ہے کارواں 
گرچہ کسی کے پاؤں میں زنجیر نہیں 
بے جان حرم ہے ویران بت خانہ 
فضا ساکت ہے ٹھہرا ہوا زمانہ 
روداد من اور حدیث دیگراں 
انکشا فات حقیقت ہے اک فسانہ 
حسن تعمیر ،احساس آفاقی 
حصار شکست ہے تیرا اے ساقی 
آو اک نیا نسخہ حیات بنایں 
آو معصومیت کے جگنو سے 
مسلط رات کا آسیب مٹا یں !!

ڈاکٹر مشتاق احمد ۔۔ دربھنگہ

1 comment: