Sunday, May 24, 2020

ڈاکٹر مشتاق احمد دربھنگہ کی تازہ تخلیق نظم۔۔۔ لاک ڈاؤن کی عید

This is my twenty fourth poem of this lockdown, entitled "Lockdown ki Eid". Please  show kindness to those who are less fortunate than us and help them to celebrate eid also. Please celebrate this eid with caution and stay safe. EID UL FITR KI MUBARAKBAD.
Please subscribe to my youtube channel:
www.youtube.com/Jahaneurdumushtaque

لاک ڈاؤن کی عید 
عید آئ ہےمگر   
 اس عید کی یاد 
ہمیں بہت تڑپاے گی
اپنی بد نصیبی 
ہمیں تا عمر رلاۓ گی 
کہ ماہ رحمت و برکت  میں 
خانہ خدا سے دور رہے ہم 
بےبس گھروں میں محصور رہے ہم 
تراویح و دعا اجتماع سے محروم رہے 
خطبہ جمعتہ الوداع سے محروم رہے 
نماز عیدکا منظر بھی میسّر نہ ہوا 
مصافحہ و معانقہ بھی مقدر نہ ہوا 
شادمانی کا ہو گزر کیوں کر 
ہر لمحہ رہا فاصلے کا ڈر 
جان گزیں دل میں ایک خوف  
اک لہر ٹیس کی مدھم مدھم 
رات بے کیف دن بھی بے رونق 
ہر طرف بے رنگ بے نور کا عالم 
بند کمروں میں غمگین  خوشبو ہے 
اپنی تنہائی اور آرزو ہے 
کہ کوئی تودے  دستک 
دل مضطر کو  سکوں آ ے 
عید آتی تھی اور تا قیامت آ ے گی 
مگر اے خدا 
پھر کبھی نہ ایسی عید آے 
اداسیاں مقدر ہو ں 
اور عید آ ے
عید آئ ہے مگر 
اس عید کی یاد 
ہمیں بہت تڑ پا ے گی 
ہمیں تا عمر رلاۓ گی !

No comments:

Post a Comment