بدھ، 14 ستمبر، 2022

بڑھیں فطرت کی طرف "اداریہ"

اداریہ

بڑھیں فطرت کی طرف

 

            ادویات سے ہٹ کر "فطرت "کی طرف بڑھیں۔ اگر انسان اور انسانیت کو مزید چند دہائیوں تک زندہ رہنا ہے تو یہ صدی کی سب سے بلند آواز ہونی چاہیے۔

            افراد کا لالچ تناسب اور قوموں سے بڑھ چکا ہے اور اب وہ ادویات اور ویکسین کے ذریعے ملکوں کو فتح کرنا چاہتے ہیں۔ دنیا پر تسلط کے لیے پہلے بھی بہت سے طریقے آزمائے گئے، فوج، اسلحہ و بارود، تجارت، صنعت، لیکن لالچ اب تک نہیں بجھ سکا۔ اس لالچ نے اب ایک نئی جہت اختیار کر لی ہے یہاں تک کہ لوگوں کو مارنے ،بیمار اور معذورکرنے تک تیار ہوگئے ہیں۔

ڈبلیو ایچ او نے یورپی پارلیمنٹ کے سامنے دواسازی کمپنیوں کے زیر اثر سوائن فلو کو وبائی مرض کے طور پر جھوٹا اعلان کرنے کا اعتراف کیا۔ اس نے وبائی مرض کے لیے معیار کو وبائی مرض کے حقیقی خطرے سے تبدیل کر کے ،رپورٹ ہونے والے کیسوں کی تعداد میں کر دیا۔

دواساز اور ویکسین کی صنعت اب قوموں کے درمیان سرحدوں کو ختم کرنے کے لئے تیار ہے۔ یہ پوری دنیا میں ایک امیر طبقے کا متفقہ کنٹرول اور حکمرانی قائم کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ اس سمت میں کورونا ایک بڑا تجربہ تھا۔ اس سے پہلے فارما انڈسٹری نے اسپینش فلو، ایڈز، سوائن فلو، ایبولا، زیکا جیسی دیگر بیماریوں کے نام پر کھلواڑ کیا لیکن ناکام رہا۔ اصل کامیابی کووڈ کے ساتھ ملی اور یہ میڈیا کو اپنے کنٹرول میں لانے سے ممکن ہوا۔اب پھر یہاں سے کیا ہو گا۔

کچھ لوگ ایک نئے عالمی نظام کی بات کرتے ہیں جس میں ایک آمرانہ یک عالمی حکومت موجودہ خودمختار قوموں کی حکومت کی جگہ لے گی۔

ایک واحد دنیا کا تصور قابل قبول ہے جہاں کوئی متحارب قومیں نہ ہوں۔لیکن جہاں ممالک  مسلسل ایک دوسرے کے گلے پڑے ہوں، اپنے جی ڈی پی کا زیادہ تر حصہ اپنے بھوکے کروڑوں کا پیٹ پالنے کے بجائے اسلحہ خریدنے پر خرچ کرتی ہوں۔ ایسی واحد دنیا کا تصور اپنی جگہ لیکن اسے کون لانا چاہے گا یہ کس چیز کی لئے اچھی ہے۔ کیا اسے  اس لئے لایا جائے گا جو ہر چیز کو اپنے تسلط میں رکھنا چاہتا ہے اور جو دنیا کو اپنی خواہشات کے مطابق چلانا چاہتا ہے۔  تو یہ بدترین قسم کی غلامی ہوگی۔

 

حکومت مستحکم اور متوازن ہو گی اگر یہ عقلمند اور ہمدرد کی حکمرانی ہوگی، وہ مساوات پر مبنی ہو نہ کہ آمرانہ۔ یہ اگر دوسروں کی آزادی کو پامال کیے بغیر افراد کو زیادہ آزادی فراہم کرتی ہو۔

کیا یہ ممکن ہوگا؟ مستقبل کے بارے میں کون جانتا ہے۔

اس کے باوجود اس ایک فرد کے تعریف کرنی چاہئے ، جو طبی تاریخ کو دوبارہ لکھنے کی کوشش کر رہا ہے۔ وہ میڈیکل انڈسٹری کے لیے موت کا ناسور ثابت ہو رہا ہے۔ اس کی نئی ایجادات جس کا اب تک کوئی تصور بھی نہیں کیا گیا تھا۔ وہ غریبوں کا مسیحا ثابت ہو رہا ہے۔ وہ آہستہ آہستہ نام نہاد ماڈرن میڈیسن کی جڑیں کھود رہا ہے۔ اپنی نت نئی دریافتوں سے ہر قسم کی بیماریاں، طرز زندگی ہو یا زندگی کا عمر، عارضی ہو یا مستقل، موروثی ہو یا نہ ہو، آہستہ آہستہ اور یقیناً وہ ہر قسم کی بیماریوں کی جڑیں کھود کر ان کا ہمیشہ کے لیے خاتمہ کر رہا ہے۔

بیماری اس وقت تک طاقتور رہتی ہے جب تک آپ اسے سمجھ نہیں لیتے۔ اس سے تمہاری لاعلمی سب سے بڑی بیماری ہے۔ ایک بار سمجھ جانے کے بعد، بیماری  کا آپ پر کوئی اختیار نہیں رہتا۔ آپ کو بیماری  کے چنگل سے، ادویات کے چنگل سے، طبی پریکٹیشنرز اور طبی انفراسٹرکچر، طبی صنعت سے آزاد کرایا گیا ہے۔

اس کے لیے آپ کو علم کی ضرورت ہے، سب سے آسان قسم کا علم۔ غذائیت کا علم اور ہمارے روزمرہ کے معمولات کو انجام دینے کا طریقہ۔ ایک ایسا علم جو آپ کے باورچی خانے کے سامان میں موجود ہے، ایک ایسا علم جو آپ کے 'جوگاڑ' (معمولی چیزوں) کو بھی عظیم طبی سازوسامان میں بدل دیتا ہے۔ ایک ایسا علم جو کشش ثقل کی طاقت کو آپ کے طبعی مسائل کو حل کرنے کاکام کرتا ہے۔ ایک ایسا علم جو سادہ چیزوں اور معاملات کو بھی آپ کے لیے  بہت زیادہ سودمند ثابت کرے گا۔ ایک ایسا علم جو کہ ہر پیچیدہ مسئلے کا بہت آسان حل نکالے گا ۔

ایسا علم جہاں فطرت آپ کی دوست ہے نہ کہ دشمن۔ ایک ایسا علم جو آپ کو فطرت کے ساتھ بقائے باہمی میں رہنے دیتا ہے ، اس سے مخالفت میں نہیں۔ فطرت وہی ہے جس سے آپ  کی تخلیق  ہوئی ہے ، فطرت وہ ہے جہاں آپ رہتے ہیں اور سانس لیتے ہیں۔ صرف ایک شخص جو آپ کو اس سے آگاہ کرتا ہےاور وہ ہے "ڈاکٹر بسوروپ رائے چودھری"۔

دعا ہے کہ اللہ ہم سب کو صحت مند خوش و خرم رکھے۔

 

                                                         مدیر: ڈاکٹر سید عارف مرشدؔ 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

نور الدین زنگی بنوں گا* I can Proudly say *I Love Prophet* Muhammadﷺ s.a.a.w. *ڈاکٹر محمد اعظم رضا تبسم* کی کتاب *کامیاب زندگی کے راز* سے انتخاب

 *میں نور الدین زنگی بنوں گا*  I can Proudly say  *I Love Prophet* Muhammadﷺ s.a.a.w.  *ڈاکٹر محمد اعظم رضا تبسم* کی کتاب *کامیاب زندگی کے ر...