پیر، 5 ستمبر، 2022

تھیلیسیمیا

 

تھیلیسیمیا

 

                بچوں کی سب سے عام بیماری کیا ہو سکتی ہے؟ ملیریا، نمونیا، اسہال، تپ دق لیکن یہ سب قابل علاج ہیں۔ لیکن کچھ بیماریوں کو موروثی قرار دیا جاتا ہے اور کہا جاتا ہے کہ وہ زیادہ تر لاعلاج ہیں۔

ایسی ہی ایک بیماری تھیلیسیمیا ہے۔ یہ عارضہ خون کے سرخ خلیوں کی ضرورت سے زیادہ تباہی کا باعث بنتا ہے جو خون کی کمی کا باعث بنتا ہے۔ یہ تھکاوٹ، چہرے کی خرابی اور بچوں کی بڑھوتری میں سست روی کی طرف بھی جاتا ہے۔

بیماری کے صرف دو ہی حل ہیں۔ ایک بون میرو ٹرانسپلانٹ ہے جو کہ انتہائی خطرناک اور بہت مہنگا ہے۔ دوسرا خون کی منتقلی جو باقاعدگی سے وقفے  وقفے پر، زیادہ تر مہینے میں ایک یا دوبار کرنا پڑتا ہے۔

دوسروں کا خون حاصل کرنے والا بچہ اپنی پوری زندگی کسی اور کے خون پر منحصر ہو جاتا ہے۔ تب بھی تھیلیسیمیا کے مریض کی زندگی مختصر رہتی ہے، اس کی عمر 20 سال کے لگ بھگ ہے۔ بچہ اور اس کا پورا خاندان پھر نفسیاتی طور پر بیمار ہو جاتا ہے۔

تھیلیسیمیا سے متاثرہ بچے کے والدین کی اذیت کے بارے میں سوچیں۔ ہر ماہ اسے اپنے بچے کے لیے مناسب خون عطیہ کرنے والے کی تلاش کرنی پڑتی ہے، اور ایک مماثل خون ایک ایسے بچے کی پرورش کرتا ہے جس کا مستقبل تاریک ہے اور اس کے کوئی امکانات نہیں ہیں۔

ہر سال ملک کی آبادی میں 10,000 نئے تھیلیسیمیا کے بچے شامل ہوتے ہیں جن کا خیال رکھنا پڑتا ہے اور جس کا ابھی تک کوئی حل نہیں نکل سکا۔

دکن ہیرالڈ کی ایک رپورٹ کے مطابق حکومت تھیلیسیمیا کے بچوں کے علاج اور ادویات کی خریداری کے لیے 15 کروڑ روپے مختص کرتی ہے جو کہ نہ ہونے کے برابر ثابت ہوتی ہے اور پھر بھی ضرورت مندوں تک نہیں پہنچ پاتی۔ ایک اندازے کے مطابق تھیلیسیمیا کے ایک بچے کو بون میرو ٹرانسپلانٹ کے لیے 20 لاکھ اور خون کی منتقلی کے ہر سیشن کے لیے 15000 روپے درکار ہوتے ہیں۔

ابھی ایک امید کی کرن جاگی ہے۔ ڈاکٹر بسواروپ رائے چودھری اور ان کی ٹیم تھیلیسیمیا کے مریضوں کے لیے ایک علاج لے کر آئے ہیں اور اس سے بھی زیادہ، وہ ان کا مفت علاج کر رہے ہیں۔

بھارت، نیپال، سری لنکا اور بنگلہ دیش جیسے ممالک سے آئے ہوئے تقریباً 200 بچے پہلے ہی ان کے ساتھ اس طرح کا علاج کر رہے ہیں۔ وہ اور ان کی ساتھی ڈاکٹر نمیتا بچوں کو انتھک اور چوبیس گھنٹے آن لائن مدد فراہم کر رہے ہیں۔

 

مزید یہ کہ وہ نہ صرف یہ کہ ان کا مفت علاج کر رہا ہے بلکہ وہ اپنی تمام معلومات کو اپنی ویڈیوز کے ذریعے ان تک پہنچا کر دوسروں کو بھی تربیت دے ر ہے ہیں، تاکہ وہ اپنا علاج کر سکیں۔

دنیا میں علم کی دو قسمیں ہیں، ایک وہ جو آپ حاصل کر سکتے ہیں ، اپنے لیے پیسہ کمانے کے لیے اور دوسرا یہ کہ معاشرے کو بڑے پیمانے پر فائدہ پہنچانا۔

اس کے علاوہ ایک قسم کا علم ہے جو امیر اور پیسے والوں کی خدمت میں صرف ہوتاہے اور دوسرا معاشرے کے غریبوں کے لیے۔ غریبوں کے لیے سستا اور خود انحصار ہونا چاہیے۔

ایک سائنسدان یا انجینئر کس قسم کا علم دریافت کرتا ہے اس کا انحصار اس بات پر ہے کہ معاشرے میں جس طبقے کی خدمت کرتا ہے۔ اس کے مطابق وہ تیار ہو جاتا ہے۔ یہ امیر اور صاحب نصاب کے لیے ہو سکتا ہے یا غریبوں کے لیے ہو سکتا ہے۔ نیز وہ اپنے علم کو موت اور معاشرے کی تباہی کے لیے استعمال کر سکتا ہے یا زندگی اور جینے کے لیے استعمال کر سکتا ہے۔ وہ مارنے کے لیے ایٹم بم اور نقصان دہ ادویات بنا سکتا ہے یا لوگوں میں  ان کی بیماریوں کا علاج کر سکتا ہے اور خوشی اور ہم آہنگی لا سکتا ہے۔ سب کا انحصار اس بات پر ہے کہ وہ دوسرے سے محبت کرتا ہے یا صرف اپنے آپ سے محبت کرتا ہے۔

ڈاکٹر بسواروپ رائے چودھری کا علم بنیادی طور پر دوسروں کے ساتھ بانٹنے کے لیے ہے۔ جو لوگ ان کے ساتھ کام کر رہے ہیں وہ لوگوں کی محبت اور دل جیتنے کے لیے کام کر رہے ہیں۔

میگزین BISWAS ان کے مقصد کو آگے بڑھانے  کی ایک کڑی ہے۔ اس زمین پر لوگوں کو ان کی بیماریوں سے نجات دلانے اور خوش و خرم زندگی گزارنے کے لیے ایک بہت بڑا تجربہ کیا جا رہا ہے۔ ایک ایسی زندگی جو خدا کی طرف سے ایک نعمت ہے۔

کوئی بڑا کام چند افراد سے نہیں ہوسکتا، ہاں چند افراد راستہ دکھاسکتے ہیں اور رہنمائی کر سکتے ہیں، عوام کو ان کے قدم سے قدم ملاکر چلنا ہوگا۔ علم پھر ان کا سب سے بڑا ہتھیار بن جاتا ہے۔

اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں جہالت سے علم کی طرف لے جائے۔

 

اے اللہ مجھے باطل سے حق کی طرف لے جا۔

اے اللہ مجھے اندھیروں سے روشنی کی طرف لے جا۔

اے اللہ مجھے موت سے ابدیت کی طرف لے جا۔

مدیر: ڈاکٹر سید عارف مرشدؔ


کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

کیا تنقید فی نفسی بری چیز ہے؟؟* کیا اسے شجر ممنوعہ بنا دینا چاہیے؟؟

**کیا تنقید فی نفسی بری چیز ہے؟؟* کیا اسے شجر ممنوعہ بنا دینا چاہیے؟؟ :::::::::::::::::::::::::::::::::::::::: اصلاح کے لیے تنقید اچھی چیز ...