بدھ، 21 ستمبر، 2022

سانس کھو گئی, نظم از تنہا تماپوری

       سانس کھو گئی

چولہے کے قہقہوں پہ چلیں

بھوک لکڑیاں

بستر کی سلوٹوں میں

حادثوں کی سوئیاں

مکڑی کا جال بنتی ہوئی

عمر انگلیاں

احساس کا ابلتا ہوا

دودھ پی گئی

حالات بلیاں

سوچا تھا

نئے رنگ بھروں

سانس کھو گئی !!!

                        تنہا تماپوری


 


کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

کیا تنقید فی نفسی بری چیز ہے؟؟* کیا اسے شجر ممنوعہ بنا دینا چاہیے؟؟

**کیا تنقید فی نفسی بری چیز ہے؟؟* کیا اسے شجر ممنوعہ بنا دینا چاہیے؟؟ :::::::::::::::::::::::::::::::::::::::: اصلاح کے لیے تنقید اچھی چیز ...