بدھ، 21 ستمبر، 2022

شب صدتماشہ نظم از تنہاتماپوری

 

شب صدتماشہ

                        تنہاتماپوری

 

خانہ دل میں لئے دولت بے نام

سنہری لمحے

ایک بے چین سکوں بخش تڑپتی سوغات

دل سلگتے ہوئے

بہکی ہوی سانسوں کی مہک

نور برساتی ہوئی رات میں

دوپیاسے بدن

سیل درسیل

سفر تا بہ سفر

کس کو بتلاوں بھٹکنے کا سبب؟

منجمد خوابوں میں کس دکھ کا مداواڈھونڈوں

دست تسخیر میں

سورج ہے نہ مہتاب کرن

صرف شب بھر کی رفاقت

مری مٹھی میں رہی

مجھ کو جی گھر کے

اسی شب میں ابھی جینا ہے۔!!

 

٭٭٭٭٭

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

کیا تنقید فی نفسی بری چیز ہے؟؟* کیا اسے شجر ممنوعہ بنا دینا چاہیے؟؟

**کیا تنقید فی نفسی بری چیز ہے؟؟* کیا اسے شجر ممنوعہ بنا دینا چاہیے؟؟ :::::::::::::::::::::::::::::::::::::::: اصلاح کے لیے تنقید اچھی چیز ...