پیر، 24 اکتوبر، 2022

اس میں کوٸی بہتری ہو گی* *I Don’t think* God wants us to get back to *Normal* . *I think* He wants us to get to *Better* .

 *اس میں کوٸی بہتری ہو گی* 

 *I Don’t think* God wants us to get back to *Normal* . *I think* He wants us to get to *Better* .

 *ڈاکٹر محمد اعظم رضا تبسم* کی کتاب *کامیاب زندگی* کے راز سے انتخاب ۔ *اقصی نور* ۔گلوبل ہینڈز ۔پرانے وقتوں کی بات ہے ایک نامور بادشاہ ہوا کرتا تھا۔ *بادشاہ کے وزیروں میں سے ایک وزیر بہت عقلمند تھا۔بادشاہ جب بھی کوٸی بات کرتا وزیر جواب میں کہتا اس میں کوی بہتری ھو گی* ۔

وزیر کو اس بات پر یقین کامل تھا کہ ہر کام میں قدرت کی طرف سے کوٸی نہ کوٸی بہتری ہوا کرتی ہے ۔اس لیے وہ تقریبا ہر معاملہ میں اس جملہ کا استعمال کر کے دل کواطمینان دیتا۔

 *ایک دن بادشاہ کی انگلی کٹ گئی بادشاہ تکلیف سے چلایا تو وزیر نے تسلی دیتے ہوۓ کہا جناب پرہشان نہ ہوں اس میں بھی اللہ کی طرف سے کوٸی بہتری ہو گی* ۔ بادشاہ کو وزیر کی اس بات نے بہت غصہ دلایا چنانچہ اس نے وزیر کو زندان میں ڈلوا دیا ۔ اب اس حکم کے جاری ہونے پر بھی وزیر نے بڑے اطمینان سے کہا اس میں بھی اللہ کی کوٸی بہتری ہو گی۔

بہرحال بادشاہ کا درد کم ہوا اور یوں دن گزرتے گٸے ۔ایک دن اچھا موسم دیکھ کر بادشاہ شکار کرنے نکلا ۔دوران شکار تیز طوفان آیا بادشاہ اپنے سپاہیوں سے الگ ہو گیا ۔ **جنگل میں مارا مارا پھرتا وہ ایک ایسے قبیلے کے قریب جا پہنچا جو سال میں ایک دفعہ ایک بہترین صحت مند انسان کی قربانی دیتے تھے* قبیلے کے ماہر جنگجووں نے بادشاہ کو پکڑا اور اپنے سردار کے پاس لے گٸے ۔اب قبیلے کے سردار نے بادشاہ کے ذبح کرنے کا حکم جاری کیا ۔بادشاہ نے انہیں لاکھ بتانے کی کوشش کی کہ میں بادشاہ ہوں میری سلطنت میں آپ کا جنگل بھی ہے مگر انہیں بادشاہ کی زبان کی سمجھ نہیں آرہی تھی ۔

 *شام کو جب ایک بڑا آلاو جلایا گیا اور بادشاہ کو سجا کر سنوار کر قربان گاہ کے قریب لایا گیا تو بھی بادشاہ کی ساری کوششیں ناکام گٸی* ۔ بالآخر اسے موت کر پروانہ سمجھ کر قبول کرنے کو تیار ہو گیا کیونکہ اب اس سے سوا کوٸی چارا نہیں نظر آ رہا تھا۔ بادشاہ مکمل طور پر مایوس ہو چکا تھا اسے موت سامنے نظر آ رہی تھی۔ جب قربانی کا وقت آیا اور بادشاہ کو ذبح گاہ کے مقام پر پہنچایا تو ذبح کرنے والے نے ایک درد بھری آواز لگاٸی جس پر سب پریشان ہو گٸے ۔ *دراصل اس نے بتایا کہ یہ انسان ناقص ہے اس کے ہاتھوں کی انگلیاں پوری نہیں ۔لہذا دیوتا کی بارگاہ میں اس کی قربانی قبول نہیں ہو گی ۔* یوں انہوں نے بادشاہ کو چھوڑ دیا ۔اس وقت بادشاہ کو یاد آیا کہ *میرا وہ وزیر ٹھیک کہتا ہے کہ ہر کام میں اللہ کی بہتری ہوتی ہے* ۔یہ کہانی ہمیں اپنے رب پر یقین کامل دلاتی ہے ہماری زندگیاں بھی بے یقینی سے بھری پڑی ہیں ۔ہم نے خدا سے سوا جب ظاہری اسباب پر بھروسہ کرنا شروع کر دیا ہے ۔ *جب سے ہمارے یقین متزلزل ہوۓ ہیں ہماری پریشانیوں میں اضافہ ہوتا جارہا ہے* ۔یقین ایک امید کی طرح ہے ۔ *اللہ فرماتا ہے ۔میں بندے کے گمان کے مطابق ہوں ۔مجھ سے اچھا گمان رکھو ۔میری رحمت سے مایوس نہ ہوں ۔* یقین کی طاقت انسان کو حوصلہ دیتی ہے مضبوط بناتی ہے ۔ اللہ کا قرب دیتی ہے ۔ خود کو سمجھاٸیے آپ کا خدا آپ سے بہت پیار کرتا ہے وہ آپ کو کبھی تنہا نہیں چھوڑے گا۔ وہ آپ کو کامیاب دیکھنا چاہتا ہے اس کے بناۓ قوانین میں سے ہر ایک میں کوٸی نہ کوٸی حکمت ہے۔ *اس کے عطا کرنے میں بھی حکمت ہے اور واپس لے لینے میں بھی کوٸی حکمت ہوتی ہے ۔* وہ اپنے بندوں کی بہتری ہی چاہتا ہے ۔ بس جب مساٸل آٸیں تو یقین رکھیے یہ دنیا ہے اور مساٸل کا گھر ہے ہمیں انہی مساٸل کے ساتھ جینا ہے اور *ہر مسٸلہ اپنے اندر کوٸی نہ کوٸی حکمت رکھتا ہے اور صبر کا دامن تھامے رکھنا ہے کہ اللہ نے خود فرمایا* ۔ بے شک اللہ صبر کرنے والوں کے ساتھ ہے ۔ *اگر آپ چاہتے ہیں کہ خدا آپ کے ساتھ ہو تو صبر اور حکمت سے اپنے معاملات کریں* یقینا وہ ہی ہے جو دلوں کو طاقت دیتا ہے اور انسان کو قوت فیصلہ بھی ۔*شکریہ ... .

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...