اتوار، 16 اکتوبر، 2022

شیطان کی رسیاں💫 Your *degree* is just a piece of paper, your *education* is seen in your *behavior* .

💫شیطان کی رسیاں💫

Your *degree* is just a piece of paper, your *education* is seen in your *behavior* .

 *ڈاکٹر محمد اعظم رضا تبسم* کی کتاب *کامیاب زندگی کے راز* سے انتخاب ۔ *گلوبل ہینڈز* 

 *کہتے ہیں کہ ایک دن شیطان بیٹھا رسیوں کے پھندے تیار کر رہا تھا.. کچھ موٹی موٹی رسیوں کے پھندے تھے ۔* کچھ باریک اور کمزور رسیوں کے پھندے تھے.. وہاں سے ایک علم والے کا گذر ہوا تو اس نے شیطان سے پوچھا.. *"ارے او دشمن انساں ! یہ کیا کر رے ہو..؟"* 

شیطان نے سر اٹھا کر دیکھا اور اپنا کام جاری رکھتے ہوئے بولا.. " *دیکھتے نھیں حضرت انسانوں کو قابو کرنے کے لیے پھندے تیار کر رہاہوں.."* 

ان حضرت نے پوچھا.. *"یہ کیسے پھندے ہیں کچھ موٹے کچھ ہلکے..؟"* 

شیطان نے جواب دیا.. *"پھندے ان لوگوں کے لیے ہیں جو شیطان کی باتوں میں نہیں آتے.. لہذامختلف قسم کے پھندے تیار کرنے پڑتے ہیں.. کچھ خوشنما' کچھ موٹے' کچھ باریک.."* 

ان حضرت کے دل میں تجسس پیدا ہوا.. پوچھا.. 

*"کیا میرے لیے بھی کوئی پھندا ہے..؟"* 

شیطان نے سر اٹھا کر مسکراتے ہوئے کہا.. 

" *آپ علم والوں کے لیے مجھے پھندے تیار نہیں کرنے پڑتے.. آپ لوگوں کو تو میں چٹکیوں میں گھیر لیتا ہوں.. علم کا تکبر ہی کافی ہے آپ لوگوں کو پھانسے کے لیے.."* 

ان حضرت نے حیران ہو کر پوچھا.. *"پھر یہ موٹے پھندے کس کے لیے ہیں..؟"* 

شیطان نے کہا.. 

" *موٹے پھندے اخلاق والوں کے لیے ہیں جنکے اخلاق اچھے ہیں.. ان پر قابو پانا مشکل ہوتا ہے..* علم کا تکبر سب سے برا تکبر ہے اگر آپ کچھ جانتے ہیں تو اس پر عمل کیجیے علم کا حق عمل سے ادا ہوتا ہے ۔ جو لوگ اپنے علم سے نفع نہیں اٹھاتے وہ اس چراغ کی طرح زندگی جیتے ہیں جس کی روشنی سے دوسرے تو فاٸدہ اٹھاتے ہیں بیچارہ خود محروم رہتا ہے ۔ *موجودہ دور میں ایک بیماری عام ہو رہی جس کی وجہ سے بحث جنم لیتی ہے اور لوگ بحث و مباحثہ میں گھنٹوں اپنا وقت ضاٸع کرتے ہیں ۔ وہ بیماری یہ کہ یار جو میں جانتا ہوں اسے کہاں معلوم ۔ بس پھر ہر کوٸی اپنی اپنی معلومات ادھوری معلومات بنا ایک دوسرے کی سنے جھاڑنے لگتا ہے نتیجہ بحث میں ناراضی بد گمانی اور نفرت جنم لیتی ہے ۔* علم کا پہلا فاٸدہ ہی شعور ہے ۔ آپ کو سہی معنوں میں اہل علم نظر آٸیں گے جو علم کی وجہ سے عاجزی اختیار کیے ہوتے ہیں ۔ *والد گرامی اکثر کہتے ہیں جس درخت پر پھل لگتے ہیں اسے جھکنا آتا ہے ۔ جس درخت میں جتنی نرمی ہے آپ اسے اتنا ہی میٹھا پھل نفع مند پھل دینے والا پاٸیں گے ۔* ڈھول پر ہاتھ ماریں تو اس کی آواز بہت زیادہ آتی ہے شور مچ جاتا ہے اس کی وجہ کے وہ اندر سے خالی ہوتا ہے ۔ *سچے اور اصل علم والے اندر سے بھرے ہوتے ہیں علم کے سمندر کے سمندر پی کر بھی شور نہیں مچاتے ۔* وہ علم بھلا کیسا علم ہے جو آپ کو تکبر میں مبتلا کردے ۔ وہ کیسا علم ہے جو بد تمیز بنا دے ۔ بدتمیز انسان یا معلومات کا انساٸیکلوپیڈیا یاد رکھا ہوا انسان علم کی روحانی لذت سے محروم ہوتا ہے اس لیے وہ عاجز نہیں ہوتا ۔ *علم کا زیور اخلاق ہے عمل اس کا نور ہے مسجود ملاٸک میں تکبر نہیں ہونا چاہیے* ۔ اسے تو اپنے شب وروز بارگاہ خداوند میں بصد عجز و نیاز شکر بجا لانے میں بسر کرنے چاہیے ۔ زندگی ہے ہی کتنی اور اگر وہ بھی میں میں میں کی رٹ لگاتے گزار دی تو عمل نافع کب ہو گا ۔ آپ نے علم کے سمندر پی رکھے ہیں مگر کردار سے اظہار نہیں ۔ *زبان میں چاشنی نہیں دل میں عاجزی نہیں نظر میں حیا نہیں گفتار میں سچاٸی نہیں تو تقوی کہاں سے حاصل ہو گا ۔* علم تو تقوی کا منبع ہے بارگاہ لم یزل میں حاضری کیسے ہو ۔ عالم اور جاہل کا فرق کہاں سے ہو گا ۔ لہذا علم ادب کے ساتھ متصف رکھیں اور اخلاق کا دامن ہرگز مت چھوڑیں ۔ اخلاق سے متعلق حدیث شریف میں ہے کہ اعمال میں سب سے زیادہ وزنی چیز اخلاق ہوگا.." اللہ سے دعا مانگا کریں ۔ انسان بہت ضعیف ہے کمزور ہے بہک جاتا ہے اس کی بارگاہ بیکس پناہ میں صبح و شام ایسے عرضی پیش کیا کریں 

 *اَللّٰهُمَّ اِنِّیْ اَعُوْذُبِكَ مِنْ مُنْكَرَاتِ الْاَخْلَاقِ وَالْاَعْمَالِ وَالْاَھْوَاءِ* 

اے ﷲ! بے شک میں برے اخلاق ، برے اعمال اور بری خواہشات سے تیری پناہ مانگتا ہوں۔. 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...