منگل، 18 اکتوبر، 2022

وکیل اور دیہاتی مزاحیہ

 *📝بزم اردو ✍️*


*ﺍﯾﮏ دیہاتی ﮔﺎﺅﮞ ﺳﮯ ﺷﮩﺮ ﺟﺎ ﺑﺴﺎ، ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺎﺗﮫ  ﺍﯾﮏ ﺩﯾﺴﯽ ﻣﺮﻏﯽ ﺑﮭﯽ ﻟﮯ ﮔﯿﺎ۔ ﻣﺮﻏﯽ ﺭﻭﺯ ﺍﻧﮉﺍ ﺩﯾﺘﯽ تھی۔*


 *ﻣﺮﻏﯽ نے ایک دن  ﻏﻠﻄﯽ ﺳﮯﺍﻧﮉﺍ ﭘﮍﻭﺳﯽ ﮐﮯ گھر ﺟﺎ ﮐﮯ ﺩﮮ ﺩﯾﺎ۔ دیہاتی ﮐﻮ ﺍﻧﮉﺍ ﻧﮧ ﻣﻼ تو اس نے ﭘﮍﻭﺳﯽ ﻭﮐﯿﻞ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ. ﻭﮐﯿﻞ ﻧﮯ کہا، ﺍﻧﮉﺍ تو ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮨﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ دے ﮔﺎ نہیں ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﻧﮉﺍ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﻠﮑﯿﺘﯽ ﺍﺭﺍﺿﯽ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ، ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﻗﺎﻧﻮنا" ﺍﺱ ﮐﺎ ﺣﻖ ﺑﻨﺘﺎ ﮨﮯ۔ دیہاتی ﺑﻀﺪ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻣﺮﻏﯽ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮨﮯ  ﺍﻧﮉﺍ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ۔*


*ﺑﺎﺕ بڑھنے ﻟﮕﯽ تو  دیہاتی ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﻨﮉﻭ ﺑﻨﺪﮦ ﮨﻮﮞ، ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮨﺎﮞ ﺍﯾﺴﯽ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﮐﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﻣﺮﺩﺍﻧﮧ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﮯ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ، ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻮ ﻣﮑﺎ ﻣﺎﺭﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﺟﻮ  ﻣﮑﮯ ﺳﮯ ﺟﻠﺪﯼ ﺳﻨﺒﮭﻞ ﺟﺎﺋﮯ ﻭﮦ ﺟﯿﺖ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﻣﺘﻨﺎﺯﻋﮧ ﭼﯿﺰ ﭘﺮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺣﻖ مان ﻟﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔*


*ﺷﮩﺮﯼ ﻭﮐﯿﻞ ﮨﭩﺎ ﮐﭩﺎ ﺗﮭﺎ، اس  ﻧﮯ دیہاتی پر ایک نظر ڈالی اور ﭼﯿﻠﻨﺞ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮﻟﯿﺎ۔*


*ﭼﻮﻧﮑﮧ ﺍﻧﮉﮮ ﮐﯽ ﻣﻠﮑﯿﺖ ﮐﺎ ﺩﻋﻮﯼ' دیہاتی نے کیا تھا، ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﭘﮩﻼ ﻣﮑﺎ اسی ﻧﮯ ﻣﺎﺭﻧﺎ ﺗﮭﺎ۔*


*دیہاتی ﻧﮯ ﺩﻭ ﻗﺪﻡ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮨﭧ ﮐﺮ ﭘﻮﺭﯼ ﻗﻮﺕ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﮑﺎ ﺳﯿﺪﮬﺎ ﻭﮐﯿﻞ ﮐﯽ ﻧﺎﮎ ﭘﺮ ﻣﺎﺭﺍ۔ ﻭﮐﯿﻞ ﺩﺭﺩ ﺳﮯ ﺑﮯ ﺣﺎﻝ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﻟﻮﭦ ﭘﻮﭦ ﮨﻮﮔﯿﺎ،  ﻧﺎﮎ ﺳﮯ ﺧون بہنے ﻟگا ﺍﻭﺭ ﺳﻮﺝ ﺑﮭﯽ گئی۔ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﯿﺲ ﻣﻨﭧ ﺑﻌﺪ ﻭﮐﯿﻞ ﺳﻨﺒﮭﻼ، ﺍﭨﮭﺎ ﺍﻭﺭ  ﻣﮑﺎ ﻣﺎﺭﻧﮯ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﺎ۔*


*دیہاتی نے ﺟﻮ ﺍﺗﻨﯽ ﺩﯾﺮ ﺁﺭﺍﻡ ﺳﮯ بیٹھا  ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ، ﻭﮐﯿﻞ سے مخاطب ہوکر ﮐﮩﺎ*

 

*"وکیل صاب تُسی جیت  ﮔﺌﮯ،  رکھ لو ﺍﻧﮉﺍ، میں کل کھالوں گا "*

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...