جمعرات، 27 اکتوبر، 2022

ایک غزل اپ کی عدالت میں حاضر خدمت ہے از نوید انجم

ایک غزل اپ کی عدالت میں حاضر خدمت ہے


جاں ہتھیلی پہ لئے مجھ کو ادھر جانا ہے 

ڈر کے جینے سے تو بہتر مرا مر جانا ہے

..............................................................................کیوں نہ انکھیں مری رونے پہ کمر بستہ ہوں

اج اس نے مرے اشکوں کو گہر جانا ہے

.............................................................................

میرے حق میں کوئ نیندوں کی دعائیں کر دے

مجھ کو خوشیوں کے لئے خواب نگر جانا ہے

.........................................................................

اس لئے ناز ہے دریاوں سے نسبت رکھ کر

ان کا انجام سمندر میں اتر جانا ہے

..............................................................................

جس کو مرنا ہے مرے بھیڑ میں رہ کر انجم

ہو جدھر تازہ ہوا تجھ کو ادھر جانا ہے 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...