ہفتہ، 29 اکتوبر، 2022

اُس دیس میں کیا ہوتا ہے اور اِس دیس میں کیا ہوتا ہے

اُس دیس میں کیا ہوتا ہے اور اِس دیس میں کیا ہوتا ہے

ایک بادشاہ تَفْرِیحِ طَبَع کی غرض سے سیر سپاٹا کر نے نکلا۔ وہ ایک ایسی مملکت میں پہنچ گیا جہاں لوگ پر سکون زندگی گزار رہے تھے۔ بادشاہ کا شاندار استقبال کیا گیا۔ ملک کا نظام حکومت دیکھنے کی غرض سے اس نے عدالتی نظام دیکھنے کی خواہش ظاہر کی۔ اسے ایک عدالت میں لے جایا گیا منصف وہاں بیکار بیٹھا تھا۔کوئی مقدمہ عدالت میں نہیں تھا۔ جج نے بتایا کہ اگر کوئی سائل عدالت سے رجوع کرئے تو اسےفوراً انصاف فراہم کر دیا جاتا ہے۔ ہمارے پاس کوئی مقدمہ براۓ حصول انصاف اس وقت نہیں ہے۔

اتنے میں ایک مدعی اور مدعاعلیہ عدالت میں پیش ہوۓ۔ جج صاحب نے دونوں کو احترام اور تعظیم کے ساتھ بٹھایا اور عدالت میں آنے کی وجہ دریافت کی۔

مدعی مقدمہ نے بتایا کہ اس نے مدعا علیہ سے اپنا چالیس ہزار قرض واپس لینا تھا۔

مدعا علیہ نے اسے نقد رقم دینے کی بجاۓ چالیس ہزار مالیتی والا بانڈ دے دیا۔

قرعہ اندازی میں وہ بانڈ اوّل انعام کا حقدار ٹھرا۔

چونکہ میرا قرض چالیس ہزار تھا اس لیئے انعام کی رقم کا حقدار مدعا علیہ ہے۔

مگر وہ یہ رقم نہیں لے رہا۔ مدعا علیہ کہنے لگا کہ میں نے بانڈ مدعی کے حوالے کر دیا تھا

اس لیئے انعام کا حقدار بھی مدعی ہی ہے۔

عدالت نے فیصلہ سنایا کہ رقم کا حقدار مدعی ہے

لیکن عدالت مدعا علیہ کی بلند ظرفی کو قدر کی نگاہ سے دیکھتی ہے

لہذا عدالت حکم دیتی ہے کہ انعام کی رقم کے برابر حکومت مدعاعلیہ کو خزانہ سرکار سے

رقم ادا کرے۔ تاکہ عوام میں جائز اور ناجائز کے شعور کو فروغ حاصل ہو۔

رات کو دعوت طعام پر بادشاہ مملکت نے مہمان بادشاہ کی پریشانی بھانپ کر وجہ دریافت کی تو مہمان بادشاہ نےعدالتی فیصلہ سے آ گاہ کیا۔ بادشاہ نے مہمان بادشاہ سے سوال کیا کہ اگر آپکی مملکت میں ایسا مقدمہ دائر ہوتا تو آپکی عدالت کیا فیصلہ کرتی

مہمان بادشاہ نے بتایا کہ ایسی صورت میں منصف سب سے پہلے عدالتی کاروائی مکمل کرتا جس میں لگ بھگ دو سال کا عرصہ درکار ہوتا۔ فیصلہ کے لیئے ایک لمبی تاریخ دی جاتی۔ پھر تاریخ پہ تاریخ۔ تاریخ پہ تاریخ ۔


اس دوران چونکہ معاملہ ایک خطیر انعامی رقم کا تھا منصف حاکم اعلی سے جو عوام

کا خادم اعلی بھی ہوتا ہے سے مشورہ کرتا ۔ یقینی طور پر چونکہ معاملہ بڑی رقم کا تھا وہ

عدالت کو ہدایت کر تا۔ کہ مدعی کو انعامی بانڈ کی بجاۓ دوسرا بانڈ دے دیا جاۓ تاکہ وجہ تنازعہ

ختم ہو۔ اور عدالت کو تاکید کی جاتی کہ انعامی بانڈ اس کے حوالہ کیا جاۓ۔


اب باری بادشاہ مملکت کے حیران ہونے کی تھی۔ اس نے سوال کیا کہ منصف

حاکم اعلی کے فیصلہ کو مان لیتے ہیں تو مہمان بادشاہ نے جواب دیا کہ ہم

بڑی چھان بین کے بعد منصف تعینات کر تے ہیں ۔ اگر ہمیں رتی برابر بھی شک گزر

جاۓ کہ منصف کے عہدے کا امیدوار خود سر ہے تو اسے انٹرویو میں فارغ کر دیا جاتا ہے۔

ہمارا نظام اس سلسلہ میں مکمل طور پر فُول پروف ہے۔

مہمان بادشاہ نے مزید بتایا کہ ہمارے ایک سابقہ بادشاہ نے تخت نشین ہو نے پر ان وکلا کو جنہوں نے

اس کے تخت نشین ہونے کی خوشی میں رقص کیا تھا منصف کے عہدے سے نوازا تھا۔

اس کے بعد جب ان کی بیٹی تخت نشین ہوئی تو اس نے اپنے گماشتہ وکیلوں کو بڑی عدالت کے عہدہ سے نوازا تھا۔

دونوں کو عوام کےایک طفیلی طبقہ نے شہید کا لقب عطا کیا۔ بلکہ ان کے خاندان کے ایک فرزند

کو جو مملکت فرانس میں مقیم تھے اور کثرت شراب نوشی کی وجہ سے وفات پا گئے تھے

کو بھی شہید کا درجہ عطا فرمایا۔ ایک اور فرزند جو انکی اپنی بہن کے دور حکومت بر لب سڑک قتل ہوۓ بھی شہید کا لقب عطا کیاگیا۔


بادشاہ نے مزید سوال کیا کہ آپکے ملک میں جانور بھی ہیں ۔ بارش بھی ہوتی ہے۔ مثبت جواب پر بادشاہ نے انتہائی غمزدہ لہجے میں کہا۔ کہ یہ سب ان جانوروں کی وجہ سے ہے۔ ورنہ ایسی سلطنت کو تباہ ہو جانا چاہۓ تھا۔

اس دیس میں لگتا ہے عدالت نہیں ہوتی

جس دیس میں انسان کی حفاظت نہیں ہوتی

 

مخلوق خدا جب کسی مشکل میں پھنسی ہو


سجدے میں پڑے رہنا عبادت نہیں ہوتی


یہ بات نئی نسل کو سمجھانا پڑے گی


کہ عریاں کبھی بھی ثقافت نہیں ہوتی


سر آنکھوں پر ہم اسکو بٹھالیتے ہیں اکثر


جسکے کسی وعدے میں صداقت نہیں ہوتی


ہر شخص اپنے سر پر کفن باندھ کر نکلے


حق کےلیے لڑنا تو کبھی بغاوت نہیں ہوتی 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...