اتوار، 23 اکتوبر، 2022

فیس بک سٹیٹس (Facebook Status)


محمد سلیم سالک 


(پیش نوشت:اگر کسی صاحب کو یہ تحریر پڑھ کر کوفت محسوس ہو تو وہ ضرور اپنا فیس بک سٹیٹس چیک کریں ،کیونکہ بلڈ پریشر چیک کرنے کے بعد ہی یہ اندازہ ہوتا ہے کہ موصوف کو نمک کی مقدار میں کمی وبیشی کرنی چاہئے کہ نہیں ) 


          جب کوئی خدا کا بندہ فیس بک کے چوراہے پر اپنے ذہنی فتور کا اعلانیہ ثبوت دینے کے لئے اپنا فیس بک سٹیٹس اپ لوڈ کرتا ہے تواس کی حالت دردزہ میں مبتلا عورت سے بھی زیادہ پیچیدہ ہوجاتی ہے ۔ادھر کوئی چیز اپ لوڈ کی ،تو فیس بک سے لمحہ بھر کی جدائی بھی برداشت نہیں ہوتی ۔موصوف کی انگلیاں خود بخود سمارٹ فون کے بٹن کی تلاش میں نکلتی ہیں اور تان سیدھے فیس بک وال پر ہی ٹوٹتی ہے ۔اس طرح شعوری یا لاشعوری طور پر اپنے سٹیٹس کے بارے میں ڈارون تھیوری کی تقلید کرتے ہوئے بندروں کی طرح اٹھک بیٹھک کرتے ہوئے likes or commentsکی تفصیل چیک کرتا رہتا ہے ۔پہلے پہل اپنے خرافات بھرے سٹیٹس کو ٹکر ٹکر دیکھتا ہے کہ کون کون میرے سٹیٹس کو لائک یا کومنٹ کرتاہے جیسے آج یہ معلوم کرنے کی ٹھان لی ہوکہ کون میرا دوست ہے یا دشمن۔کسی نے خوب کہا ہے کہ فیس بک سٹیٹس چڑھانے کے بعد انسان کے اندر نوزائد بچہ جنم لیتا ہے جس کا ڈائپر باربار دیکھا جاتا ہے کہ بچے نے پوٹی تونہیں کی ہے ۔

 اب اگر کسی نے دوستی نبھانے کے لئے لائک کیا تو اس کا شکریہ ادا کرناضروری ہے ،ورنہ کفران نعمت کا مسئلہ درپیش ہوگا۔اب اگر خداناخواستہ کسی نے مجبوری میں عمدہ ،بہتر ،زبردست وغیرہ وغیرہ کا کمنٹ کرکے اپنا دامن چھڑالیا ،تو موصوف کی خوشی میں باچھیں کھل جاتی ہیں اور وہ ایک دو لفظی Adjectivesکے لئے پورے خاندا ن کی طرف سے اظہار تشکر کرتا ہے ۔اب اگر کسی نے سٹیٹس پڑھ کر بھی گھاس نہیں ڈالی تو موصوف ٹیگ کا سہار ا لیتا ہے تاکہ سند رہے کہ کوئی یہ نہ کہیں کہ ہمیں خبر بھی نہ ہوئی ۔ جب یہ حربہ بھی کارآمدنہیں ہوتا تو Mentionکرنے میں بھی نہیں ہچکچاتا ۔اگر یہ نسخہ بھی کارگر نہیں ہوا تو Massangerیا واٹس ایپ پر اطلاع دینا اپنا فرض منصبی سمجھتا ہے ۔شاید اس سے کام بن جائے ۔

 موصوف یہ سارے حربے اس لئے آزماتا ہے کہ اس کا 56انچ کا سینہ اور 72انچ کاکنیہ پھول جائے اور فیس بک کے شائقین پر ایک قسم کارعب بیٹھ جائے کہ میرے کسی بھی لایعنی سٹیٹس پر fans کی ایک لامحدودتعدادقربان ہوجاتی ہے ۔اب اگراتنی تگ ودو کے بعدبھی کسی رشتہ داریا شناساکا کمنٹ نظر نہ آئے تو فوراً فون کرکے اس کوجاہل ہونے کا فتو یٰ دیتے ہیں ساتھ ہی اپنی غلطی کاکفارہ اداکرنے کی سبیل بھی بتائی جاتی ہے ۔اس طرح وہ شخص بھی ،جو دنیا ومافیہا سے دور رہ کر فیس بک کا نظارہ کرتا تھا،پکڑ میں آجاتا ہے اور نادانستہ اس کی انگلیاں ”عمدہ “کمنٹ لکھنے کے لئے تیار بہ تیار ملتی ہیں اور ہونٹوں پر ”جان بچی لاکھوں پائے “ کا وظیفہ ورد ہوتا ہے ۔

 موصوف کے تذبذب کا پارہ اس و قت چڑھ جاتا ہے جب وہ اپنے سٹیٹس کی آوارہ گردی کرتے ہوئے انگریزی کا یہ جملہ Some one is writting a comment " " دیکھتا ہے تو اس کی دل کی دھڑکیں تیز ہوجاتی ہیں اور انتظارکاایک ایک لمحہ صدیوں پر پھیل جاتا ہے ۔

 اگر ممکن ہوسکے تو نام نہاد سے سٹیٹس کو شیئر بھی کرواتا ہے تاکہ اس کی جہالت کا ڈھنکا دوردور تک بج سکے ۔اور بزعم خود وہ اس خوش فہمی میں مبتلا ہوتا ہے کہ اس نے فیس بک پر سٹیٹس چڑھا کر فیس بک کی تاریخ کو سنہرے حروف سے مزین کردیا ہے ۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

salimsalik2012@gmail.com 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...