منگل، 18 اکتوبر، 2022

بارش کے موسم میں خوراک

 

بارش کے موسم میں خوراک

 

موسم قدرت کا انمول تحفہ ہیں۔ بارش کی پہلی ہی بارش ذہن کو خوش کر دیتی ہے۔ لیکن اس موسم میں خوراک پر زیادہ سے زیادہ توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ تب ہی یہ محفوظ رہ سکتا ہے، ورنہ بیمار پڑنے میں دیر نہیں لگتی۔

 


1۔ برسات کے موسم میں وہ غذائیں کھائیں جو ہاضمہ جوس پیدا کرتی ہیں اور جلد ہضم ہوتی ہیں۔ ان کھانوں کو ترجیح دی جائے جن میں پانی کی مقدار کم ہو۔ بارش کے موسم میں سبزیوں کی مخصوص اقسام صحت کے لیے فائدہ مند ہوتی ہیں۔ ان میں لوکی، لوکی، ٹنڈی، لیڈی فنگر، بیگن، مولی، کدو، ڈرمسٹک پرول وغیرہ نمایاں ہیں۔ اس کے علاوہ ادرک اور پودینہ بھی فائدہ مند ہے۔

 

2۔  اس موسم میں بغیر چوکر کے آٹے کی روٹیاں کھائیں۔ دالوں میں اُڑد کی دال اچھی ہوتی ہے۔ دلیا کی کھچڑی بھی کھائی جا سکتی ہے۔ جب تک بارش کے موسم میں آم نہ آجائیں، ان کا استعمال کرنا چاہیے۔ اس کے علاوہ لیموں کی مقدار بڑھا دی جائے۔ جامن کا استعمال بھی فائدہ مند ہے۔ اس موسم میں بھنے ہوئے چنے، بھنے ہوئے مکئی کا استعمال فائدہ مند ہے۔

 

بارش کے موسم میں چاٹ پکوڑیوں سے پرہیز کرنا چاہیے۔ خاص طور پر کبھی بھی دکانداروں سے نہ خریدیں۔ چھوٹی روٹی، سموسے، آلو بڑے، پکوڑے وغیرہ ہضم نہیں ہوتے۔ اسی طرح مٹھائی کا استعمال بھی کم کرنا چاہیے۔ برسات کے موسم میں زیادہ تر بیماریاں آلودہ پانی کے استعمال سے ہوتی ہیں۔ اس لیے پینے کا صاف اور جراثیم سے پاک پانی کا ہونا بالکل ضروری ہے۔ دریا یا تالاب کا پانی فلٹر کیے بغیر نہیں پینا چاہیے۔ بہتر ہوگا کہ پانی کو ابال کر چھان کر پی لیں۔

 

4۔ بارش کے دنوں میں دن میں نہ سونا چاہیے اور نہ ہی رات کو جاگنا چاہیے۔ رات کو کافی نیند لیں۔ ان دنوں میں دریاؤں، ندی نالوں اور تالابوں میں تیرنا نہیں چاہیے۔ ایک تو ان کا پانی آلودہ ہے، دوسری طرف ان دنوں دریاؤں اور ندی نالوں کا بہاؤ بھی بڑھ جاتا ہے جس کی وجہ سے کوئی ناخوشگوار حادثہ رونما ہو سکتا ہے۔

 

اس موسم میں ہمیشہ خشک کپڑے پہنیں۔ گیلے لباس سے نزلہ زکام اور جلد کی بیماریوں کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ اسی طرح ڈھکنے اور بچھانے والے بستر وغیرہ کو بھی خشک ہونا چاہیے۔ جوتے اور موزے بھی خشک ہونے چاہئیں۔ بارش میں باسی کھانا سختی سے منع ہے۔ ہمیشہ خالص، تازہ اور سبزی خور کھانا کھائیں۔ اس موسم میں سبزی خور کھانے کا استعمال اچھا نہیں ہے۔ کھانا گرم ہونا چاہیے۔

 

6۔ اس موسم میں مکھیوں، مچھروں اور حشرات الارض کی وباء بڑھ جاتی ہے جو بہت سی بیماریوں کا باعث بنتی ہے۔ مچھر ملیریا، ڈینگی، زرد بخار، کالا آزار وغیرہ جیسی بیماریوں کا شکار ہوتے ہیں، اس لیے ان کی حفاظت کرنی چاہیے۔ بہتر ہو گا کہ ان کی اصلیت کو روکا جائے۔ اس کے لیے گھر اور آس پاس کے گڑھوں میں پانی جمع نہ ہونے دیں۔ کیڑے مار ادویات کا سپرے کریں۔ پانی سے بھرے گڑھوں میں خام تیل یا مٹی کا تیل چھڑکیں۔ اس کے علاوہ سوتے وقت مچھر دانی لگائیں یا کوئی دوسرا ذریعہ، سامان استعمال کریں، جو مچھروں سے محفوظ رہے۔

 

7۔ تمام کھانے پینے کی اشیاء کو ڈھانپ کر رکھیں، یاد رکھیں کہ اگر مناسب صفائی کا خیال نہ رکھا جائے تو ہیضہ، یرقان، اسہال وغیرہ جیسی بیماریاں ہو سکتی ہیں۔

 

8۔  بارش میں کسی پھل یا سبزی کو دھوئے بغیر استعمال نہ کریں۔ اسی طرح کٹے اور کھلے پھل اور سبزیاں نہ خریدیں۔ بارش کا موسم شروع ہونے سے پہلے اپنے گھر کی چھت، نالیوں اور آس پاس کے گڑھوں کو ٹھیک کر لیں۔

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...