پیر، 17 اکتوبر، 2022

غزل* *آفتاب عالم قریشی

*غزل*

*آفتاب عالم قریشی*


*کبھی کسی کی دلآزاری ایسے بھی نہیں کی*

*کہ جب ملے ہیں ملاقات سرسری نہیں کی*


*نبھی ہے جتنی بھی جس سے، نبھی ہے خوب اپنی*

*ہمیشہ دل کی لگی کی ہے دل لگی نہیں کی*


*گلی سے آج وہ چُپ چاپ ایسے گزرا ہے*

*نظر اُٹھا کے نہیں دیکھا بات بھی نہیں کی* 


*اِسی اصول پہ گزری ہے زندگی اپنی*

*بنا ہے دوست جو، پھر اُس سے دشمنی نہیں کی* 


*بدن کو آگ لگا لی میانِ شب ہم نے*

*زمانہ یہ نہ کہے ہم نے روشنی نہیں کی*


*عداوتیں بھی ہیں پالِیں، تو اک وقار کے ساتھ*

*عدو کے مرنے پہ ہم نے کوئی خوشی نہیں کی* 


*یہ اور بات کہ دنیا نے واہ واہ کہا*

*بیان درد کیے ہم نے شاعری نہیں کی*


*تمام عُمر دعائیں دِیں ہم نے، ہر اِک کو*

*مگر کسی کے لیے بددعا کبھی نہیں کی* 


*ہمارے سر میں سفیدی ہے کس لیے عالم*

*ابھی تو ہم نے محبت بھی آخری نہیں کی* 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...