اتوار، 23 اکتوبر، 2022

اس قدر شور کہ ظلمت بھی لگی تھی ڈرنے رات سونے نہ دیا آہِ دلِ مضطر نے

اس قدر شور کہ ظلمت بھی لگی تھی ڈرنے

رات سونے نہ دیا آہِ دلِ مضطر نے


غالباً روح نے لبیک کہا تھا میری

خاک کو چاک پہ جوں ہی رکھا کوزہ گرنے


کس لیے خوف کو تم دل میں جگہ دیتے ہو

جان کتنوں کی یہاں لی ہے قضا کے ڈرنے


جن کی تعمیر میں شامل ہے پسینہ میرا

مجھ کو ٹھکرادیا یکسر انہی بام و درنے


خیر سے آنکھ چرانے کا نتیجہ ہے کہ آج 

ہر طرف سے دلِ انساں کو ہے گھیرا شر نے


گل کئی رنگ کے گلشن میں میسر تھے مگر

مجھ کو روکے رکھا الزامِ جفا کے ڈرنے


پھر دل وعقل کا چلتا ہی نہیں زور کوئی

آنکھ لگ جائے کسی سے جو محبت کرنے


شاد ان سر پھری موجوں کی خوشی کی خاطر

مسترد کتنے کناروں کو کیا ساگر نے


شمشاد شاد

9767820085 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

*بحث مت کیجیے* *Speak only* when you feel *your words* are *better than* the silence

 *بحث مت کیجیے*  *Speak only* when you feel *your words* are *better than* the silence. *ڈاکٹر محمد اعظم رضا تبسم* کی کتاب *کامیاب زندگی کے ...