منگل، 18 اکتوبر، 2022

ڈاکٹر ارشاد خان غزل

غزل 

بھوک کی شدت سے بیٹھا رورہا ہے 

کرب سر پر موسموں کا ڈھورہا ہے


پاس بوڑھے لیمپ کے ،فٹ پاتھ پر 

دن تھکن سے چور ہوکر ،سورہا ہے


وہ کشاکش ،گومگو اس کے سبب 

خواب کی تعبیر اپنی کھورہا ہے


سست رو کچھوے گئے ،آگے نکل 

بے خبر خرگوش اب بھی سورہا ہے


آسماں کی ،زیر گیتی ،سب کہی

بول وہ بھی جو زمیں پر ہورہا ہے


کم فہم ،کم زور ،کم تر ،کم نصیب 

کانٹے اپنی زندگی میں بورہا ہے


ڈھیر سے کچرے کے ،بھوکے کو ملی 

لتھڑی روٹی ،نل کے نیچے دھو رہا ہے


کھو چکی ہے قوم سب مال و متاع 

جان کیوں ارشاد اپنی کھورہا ہے



ڈاکٹر ارشاد خان 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...