اتوار، 30 اکتوبر، 2022

غزل تم نے رکھ دی ہے کتنی بھاری شرط ریزہ ریزہ ہوئی ہماری شرط

غزل


تم نے رکھ دی ہے کتنی بھاری شرط

ریزہ ریزہ ہوئی ہماری شرط


کیسے بے تاب دل کو سمجھاؤں

کیسے منظور ہو تمھاری شرط


سُرخ روٗ پھر ہوئے ہمارے چراغ

پھر مخالف ہوا نے ہاری شرط


بے قراری کا لطف لینا سیکھ

ہے محبت میں بے قراری شرط


کھو دیا توٗ نے مجھ کو عجلت میں

مان لیتا میں تیری ساری شرط


رفعتِ خاک زاد کی خاطر

کیوں نہ راغبؔ ہو خاکساری شرط


افتخار راغبؔ

دوحہ قطر 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...