منگل، 11 اکتوبر، 2022

مزاحیہ شاعری غزل* *(اسانغنی مشتاق رفیقیؔ)*

*غزل*   

*(اسانغنی مشتاق رفیقیؔ)*

دھمال ڈال رہا ہے یہ عشق کیسا ہے

مجھے سنبھال رہا ہے یہ عشق کیسا ہے

میں اپنے آپ میں خاموش رہنا چاہتا ہوں

مجھے اُجال رہا ہے یہ عشق کیسا ہے

مری رگوں میں لہو بن کے دوڑتا ہے وہی

جو مجھ کو پال رہا ہے یہ عشق کیسا ہے

کبھی بُلاتا ہے محفل میں بندگی لئے

کبھی نکال رہا ہے یہ عشق کیسا ہے

کبھی جلال سا دکھتا ہےاُس کے چہرے پر

کبھی جمال رہا ہے یہ عشق کیسا ہے

وہ میری عقل میں آیا نہیں کبھی لیکن

مرا خیال رہا ہے یہ عشق کیسا ہے

جنوں کے صحرا میں لیلیٰ کی آہٹیں لے کر

مرا غزال رہا ہے یہ عشق کیسا ہے

رفیقیؔ روز ازل سے بدلتے سانچوں میں

جو مجھ کو ڈھال رہا ہے یہ عشق کیسا ہے


*Ghazal*

*Asangani Mushtaq Rafeeqi*

Dhammal daal raha hai a ishq kaisa hai

Mujhay sanbhal raha hai a ishq kaisa hai

Mai apnay app may khamoush rehna cahta houn

Mujhay ujaal raha hai a ishq kaisa hai

Meri ragoun may lahoo ban kay dourrta hai wahi

Jo mujh ko paal raha hai a ishq kaisa hai

Kabhi bullata hai mehfil may bandagi kay liye

Kabhi nikal raha hai a ishq kaisa hai

Kabhi jalal sa dikhta hai uss kay cehray par

Kabhi jamal raha hai a ishq kaisa hai

O mayri aqhl may aaya nahi kabhi laikin

Mera khyal raha hai a ishq kaisa hai

Junoo kay sehra may laila ki aahateayn lay kar

Mera ghazal raha hai a ishq kaisa hai

Rafeeqhi rouz-e-azal say badaltay sanchoun may

Jo mujh ko dhall raha hai a ishq kaisa hai 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...