منگل، 11 اکتوبر، 2022

رباعیات ڈاکٹر محمد اسلم پرویز 'اسلم'بھاگلپور، بہار، انڈیا

رباعیات

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


دو دن کی سہولت کے سوا کچھ بھی نہیں

تھوڑی سی فراغت کے سوا کچھ بھی نہیں

ساماں اسے راحت کا سمجھنے والے

رشوت تو مصیبت کے سوا کچھ بھی نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


میں شور مچانے سے نہیں ڈرتا ہوں

میں آنکھ دکھانے سے نہیں ڈرتا ہوں

تلوار سے اک روز قلم نے یہ کہا

میں تیرے ڈرانے سے نہیں ڈرتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


ہر بات بتا دینا ضروری تو نہیں

دنیا کو پتا دینا ضروری تو نہیں

قربان ہوئی تجھ پے مری جان مگر

احسان جتا دینا ضروری تو نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کیا درد کی تفسیر فغاں سے لاؤں

کیا آہ کوئی سوز نہاں سے لاؤں

بس ہوش و خرد تھے، وہ تری نذر ہوئے

تحفہ میں کوئی اور کہاں سے لاؤں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کہتی ہے زمیں آہ! ذرا دیکھ کے چل

نازک ہے بہت راہ ذرا دیکھ کے چل

تسلیم ہے ذروں کو حکومت لیکن

اے میرے شہنشاہ! ذرا دیکھ کے چل

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس بام سے، اس در سے، کہیں دور چلو

اس گاؤں سے، اس گھر سے، کہیں دور چل

آرام سے جینے کی تمنا ہے اگر

اس شہرِ ستم گر سے کہیں دور چلو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


ڈاکٹر محمد اسلم پرویز 'اسلم'

بھاگلپور، بہار، انڈیا 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...