پیر، 24 اکتوبر، 2022

The World Is Too Much With Us BY WILLIAM WORDSWORTH دنیا ہمارے ساتھ بہت زیادہ ہے۔ ولیم ورڈز ورتھ




 The world is too much with us; late and soon,        دنیا ہمارے ساتھ بہت زیادہ ہے۔ دیر سے اور جلد،

Getting and spending, we lay waste our powers;—    حاصل کرنا اور خرچ کرنا، ہم اپنی طاقتیں ضائع کرتے ہیں۔

Little we see in Nature that is ours;        ہم فطرت میں بہت کم دیکھتے ہیں جو ہمارا ہے۔

We have given our hearts away, a sordid boon!    ہم نے اپنے دلوں کو دے دیا ہے، ایک عجیب و غریب نعمت!

This Sea that bares her bosom to the moon;            یہ سمندر جو چاند تک اپنی سینہ کو ننگا کرتا ہے۔

The winds that will be howling at all hours,        وہ ہوائیں جو ہر وقت چلتی رہیں گی

And are up-gathered now like sleeping flowers;        اور اب سوئے ہوئے پھولوں کی طرح جمع ہو گئے ہیں۔
For this, for everything, we are out of tune;            اس کے لئے، ہر چیز کے لئے، ہم دھن سے باہر ہیں؛
It moves us not. Great God! I’d rather be            یہ ہمیں منتقل نہیں کرتا ہے۔ عظیم خدا! میں زیادہ پسند کروں گا۔
A Pagan suckled in a creed outworn;                ایک کافر نے ایک عقیدہ ختم کر دیا
So might I, standing on this pleasant lea,            تو کیا میں اس خوشگوار مقام پر کھڑا ہو سکتا ہوں،
Have glimpses that would make me less forlorn;        ایسی جھلکیاں ہیں جو مجھے کم اداس کر دے گی۔
Have sight of Proteus rising from the sea;                پروٹیوس کو سمندر سے اٹھتے ہوئے دیکھو۔**
Or hear old Triton blow his wreathèd horn.            یا بوڑھے ٹریٹن کو اپنی چادر والا ہارن اڑانے کی آواز سنیں۔


**ایک جراثیم جو جانوروں کی آنتوں اور مٹی میں پایا جاتا ہے۔
    

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...