اتوار، 20 نومبر، 2022

ایک پروفیسر کی بیگم مزاحیہ تحریر

ایک پروفیسر کی بیگم نے پرندوں کی دوکان پر ایک طوطا پسند کیا اور اُس کی قیمت پوچھی۔ دوکاندار نے کہا محترمہ قیمت تو اس کی زیادہ نہیں ہے لیکن یہ اب تک ایک طوائف کے کوٹھے پر رہا ہے لہذٰا میرا خیال ہے اسے رہنے ہی دیں کوئی اور پرندہ پسند کرلیں۔ پروفیسر کی بیگم کو طوطا کچھ زیادہ ہی پسند آگیا تھا ، کہنے لگیں ’’ بھئی اب اسے یہ بھی تو پتہ چلے کہ شریفوں کے گھر کیسے ہوتے ہیں ‘‘۔ انہوں نے طوطے کی قیمت ادا کی اور پنجرہ لے کر گھر آگئیں۔ پنجرے کو ڈرائنگ روم میں ایک مناسب جگہ لٹکایا تو طوطے نے ادھر اُدھر آنکھیں گھمائیں اور بولا

 ’’ واہ ، نیا کوٹھا ! یہ کوٹھا تو پسند آیا بھئی۔‘‘ بیگم کو اچھا تو نہیں لگا لیکن وہ خاموش رہیں۔ تھوڑی دیر بعد اُن کی بیٹیاں کالج سے لوٹ کر گھر آئیں تو انہیں دیکھ کر طوطا بولا،

 ’’ اوہ نئی لڑکیاں آئی ہیں‘‘۔

بیگم کو غصّہ تو آیا لیکن پی گئیں یہ سوچ کر کہ ایک دو دن میں طوطے کو سدھا لیں گی۔ شام کو پرو فیسر صاحب اپنے وقت پر گھر لوٹے۔

 جیسے ہی انہوں نے ڈرائنگ روم میں قدم رکھا طوطا حیرت سے چیخا:


 ’’ ارے واہ جاوید! تو یہاں بھی آتا ہے ؟ !!!‘‘


           اس کے بعد سے جاوید گھر سے غائب ہے اور بیگم نے طلاق کا مقدمہ دائر کر دیا ہے۔

 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...