بدھ، 2 نومبر، 2022

وھاٹس ایپ گروپ: *دیـــــارمیــــــــر*

وھاٹس ایپ گروپ: *دیـــــارمیــــــــر*


سلسلہ : *گـــــــرہ لـــــــگائیں*

تاریخ : 1.11.2022

Poetry of Mir Taqi Mir

مصرع نمبر : 199


*میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں*


پورا شعر :


*میں چل کے آج کون سی نگری میں آگیا*

*میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں*

(محسن باعشن حسرت)


*گــــــرہیں*۔۔۔۔۔۔۔۔۔


دعویٰ ہر ایک شخص کا ھے، سچ نہیں مگر

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(احمد کمال حشمی)


میں آئینہ دکھاؤں تو کس کو دکھاؤں اب

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(اصغر شمیم)


سہتا ہے ظلم اور زباں کھولتا نہیں

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(مقصود عالم رفعت)


میں دار پر چڑھا کہ مرا جرم تھا یہی 

میرے سوا یہاں کوئی سچ بولتا نہیں

(شاداب انجم) 


یہ میری کوششوں کا نتیجہ ہے دار پر

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(اشرف یعقوبی) 


میرے سوا نہیں ہے کوئی سچ کا پاسدار

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(حسن آتش چاپدانوی)


مودی ہے دعوے دار کہ اے دیش باسیو !

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(نسیم فائق)


کٹتی نہ کیوں نثار فقط میری ہی زباں 

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(نثاردیناج پوری) 


سچ بولنے کا حشر وہ دیکھا کہ آج بھی

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(فیض احمد شعلہ)


اب گردشوں کا بوجھ اٹھاتا ہےکون یار 

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں 

(م ، سرور پنڈولوی)


سچ بولتی ہوں اور سمجھتے ہیں جھوٹ وہ 

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

 ( عصمت آرا)


کڑوی زباں پہ مصری کبھی گھولتا نہیں

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(سید اسلم صدا آمری) 


لوگوں کو مجھ سے بیر اگر ہے ، ہوا کرے

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(اشفاق اسانغنی)


خطرہ ھے جس کو جان کا ، لب کھولتا نہیں 

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں 

(سہیل اقبال )


بولوں اگر میں جھوٹ بھی، سب مان لیں گے سچ 

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

( مستحسن عزم )


کچھ بولنے سے اچھا ہے انجم کہ چپ رہوں

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں 

(مشتاق انجم)


سننے سے پہلے اس کو مجھے زعم تھا یہی

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(احمد مشرف خاور)


ہر اختلاف رائے پہ ثابت قدم ہوں میں

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

( غیاث انور شہودی)


سچ بات تو یہی ہے کہ یہ بھی نہیں ہے سچ

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(نذر فاطمی)


میں آئنہ ہوں پھر بھی یہ دعویٰ نہیں مجھے

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(جہانگیر نایاب)


کس پر بھروسہ میں کروں یارب بتا مجھے 

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(حسام الدین شعلہ)


سچ بولتا ہوں میں یہ مرا قول جھوٹ ہے

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(حشمت علی حشمت)


نظریں چرانے لگتے ہیں سب مجھ کو دیکھ کر

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

 (خورشید بھارتی) 


ہر شخص اپنے آپ سے کہنے لگا ہے یوں

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(مرشد عالم ندوی)


الفاظ اپنے اس لئے وہ تولتا نہیں

میرے سوا کوئی یہاں سچ بولتا نہیں

(شیما نظیر)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

انتخـــاب : احمد کمال حشمی (ایڈمن) 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...