اتوار، 20 نومبر، 2022

غزل از عارف محمد عارفؔ بھدرک،اڈیشا

** * غزل ** بزم عابد شعر و ادب


زندگی     سے     مذاق         کرتا ہوں

میں  نہ  جییتا ہوں   اور نہ  مرتا ہوں


تیری  دنیا  میں  میں  پل بھر کے لئے

سانس  لیتے     ہوئے   بھی  ڈرتا ہوں


چھن  گیا  مجھ  سے   میرا    کاشانہ   

میں   تری  آنکھ  میں  گھر کرتا ہوں


تیرا  سایہ  نہ   چھوڑے    ساتھ  مرا

میں   تو    جس  راہ  سے  گزرتا ہوں


ہوں مگن خود کو میں سمیٹنے  میں

روز   گرتا  ہوں    اور    بکھرتا  ہوں


میں    سمندر  کی  موج ہوں  عارفؔ

روز   چڑھتا    ہوں     اور اترتا  ہوں


*************


عارف محمد عارفؔ 

بھدرک،اڈیشا

20/11/2022 

https://www.sheroadab.org/2022/11/Ghazal by Arif Muhammad Arif Bhadrak Odisha Urdu Poetry.html

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...