جمعہ، 11 نومبر، 2022

غزل از ڈاکٹر ارشد خان

غزل 


خوبصورت زندگی لیکن اسے کیا کیجیے 

مفلسی میں درد کے پیوند لگایا کیجیے 


سانس تھم جائے اچانک ،دل کی دھڑکن بھی رکے

بن سنور کر سامنے ،ایسے نہ آیا کیجیے 


بے سبب ہی روٹھ جانا آپ کا شیوہ سہی 

آپ روٹھے ہیں اگر تو ،من بھی جایا کیجیے !


ضبط کہتا ہے کہ ان کو چشمِ ترمیں روک لیں 

د ل سے نکلے آنسوؤں کو ،نہ بہایا کیجیے 


لاکھ مجبوری سہی ،لیکن کبھی میرے لیے 

بہرصورت رسم الفت تو نبھایا کیجیے 


چاندنی کا نیم شب میں کچھ سوا ہوگا مزہ 

آپ سنیے کچھ گلے ،ہم کو سنایا کیجیے 


میرا انجام محبت ، بعد مرنے کے میرے 

محفل یاراں میں اکثر بھول جایا کیجیے 


پھول سے خوشبو جدا ہوتی نہیں ارشاد جی 

مختصر سی یاد کو دل میں بسایا کیجیے 


ڈاکٹر ارشاد خان 


Ghazal by Dr. Arshad khan

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...