جمعرات، 10 نومبر، 2022

غزل افتخار راغب : Ghazal Ifteqar raghib

غزل


عکس کے بر عکس ہر انداز تھا

جانے کس انجام کا آغاز تھا


تیری ضد کی زد میں تھا کیا دل کا حال

اک پرندہ تھا جو بے پرواز تھا


آگے آگے تھا وہ راہِ عشق میں

دم کہاں لیتا مرا دم ساز تھا


بے مزہ لگتی تھی ان کو میری آہ

کم شکستہ دل کا جب تک ساز تھا


عشق بھی جیسے سیاسی کھیل ہو

ہر وضاحت میں تری اک راز تھا


وہ ندی بھی خشک اک دن ہو گئی

جس کی طغیانی پہ دل کو ناز تھا


چہچہاتا اک پرندہ تھا یہ دل

تیرے پنجرے میں جو بے آواز تھا


کون تھا شاہِ جہانِ شعرِ تر

کون شہرِ حسن میں ممتاز تھا


اِک طرف مٹّی کا مادھو تھا کوئی

اِک طرف اِک پیکرِ طنّاز تھا


چشمِ راغبؔ میں چمک گھٹتی نہ تھی

آس کے اک دیپ کا اعجاز تھا


افتخار راغبؔ

 کتاب: کچھ اور

 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد

  اقوال سر سید،اقبال اور مولانا آزاد                                                           Sayings of Sir Syed, Iqbal and Maulana Azad...