نظرانداز کرکے مرکزی مواد پر جائیں

کویت کا ایک سچا واقعہ

 کویت کا ایک سچا واقعہ

     A true story from Kuwait

     ایک بوڑھا آدمی عدالت میں داخل ہوا تاکہ اپنا مقدمہ قاضی کے سامنے پیش کرے

قاضی نے پوچھا آپ کا مقدمہ کس کے خلاف ہے؟ 

بوڑھا: اپنے بیٹے کے خلاف۔ 

قاضی حیران ہوا اور پوچھا: کیا شکایت ہے؟ 

بوڑھا: میں اپنے بیٹے سے اس کی استطاعت کے مطابق ماہانہ خرچہ مانگ رہا ہوں

 قاضی: یہ تو آپ کا اپنے بیٹے پر ایسا حق ہے کہ جس کیلیے دلائل سننے کی ضرورت ہی نہیں ہے۔

بوڑھے نے کہا قاضی صاحب! اس کے باوجود کہ میں مالدار ہوں اور پیسوں کا محتاج نہیں ہوں، لیکن میں چاہتا ہوں کہ اپنے بیٹے سے ماہانہ خرچہ وصول کرتا رہوں

قاضی حیرت میں پڑگیا اور بوڑھے سے اس کے بیٹے کا نام اور پتہ لیکر اسے عدالت میں پیش ہونے کا حکم جاری کیا۔

بیٹا عدالت میں حاضر ہوا تو قاضی نے اس سے پوچھا:  کیا یہ آپ کے والد ہیں؟

بیٹا: جی ہاں!  یہ میرے والد ہیں

قاضی:  انہوں نے آپ کے خلاف مقدمہ دائر کیا ہے کہ آپ ان کو ماہانہ خرچہ ادا کریں

بیٹے نے حیرت سے کہا، وہ مجھ سے خرچہ کیوں مانگ رہے ہیں جبکہ وہ خود بہت مالدار ہیں اور انہیں میری مدد کی ضرورت ہی نہیں ہے

قاضی:  یہ آپ کے والد کا تقاضا ہے اور وہ اپنے تقاضے میں آزاد اور حق بجانب ہیں۔

بوڑھے نے کہا: قاضی صاحب! اگر آپ اس کو صرف ایک دینار ماہانہ ادا کرنے کا حکم دیں تو میں خوش ہوجاؤں گا، بشرطیکہ وہ یہ دینار مجھے اپنے ہاتھ سے ہر مہینے بلاتاخیر اور بلاواسطہ دیا کرے

 قاضی نے کہا:بالکل ایسا ہی ہوگا یہ آپ کا حق ہے! 

پھر قاضی نے حکم جاری کیا کہ فلان ابن فلان اپنے والد کو تاحیات ہر ماہ ایک دینار بلاتاخیر اپنے ہاتھ سے بلاواسطہ دیا کرے گا

کمرہ عدالت چھوڑنے سے پہلے قاضی نے بوڑھے باپ سے پوچھا کہ اگر آپ نے یہ مقدمہ دائر کیوں کیا، جبکہ آپ مالدار ہیں اور آپ نے بہت ہی معمولی رقم کا مطالبہ کیا؟

بوڑھے نے روتے ہوئے کہا: قاضی محترم !میں اپنے اس بیٹے کو دیکھنے کےلئے ترس رہا ہوں، اور اس کو اس کے کاموں نے اتنا مصروف کر رکھا ہے کہ میں ایک طویل زمانے سے اس کا چہرہ نہیں دیکھ سکا، جبکہ میں اپنے بیٹے سے بہت محبت کرتا ہوں، اور ہر وقت میرے دل میں اس کا خیال رہتا ہے، مگر یہ مجھ سے بات تک نہیں کرتا حتیٰ کہ ٹیلیفون پر بھی۔۔ میں اسے دیکھ سکوں؛ چاہے مہینہ میں ایک دفعہ ہی سہی، اس لیے میں نے یہ مقدمہ درج کیا ہے۔

یہ سن کر قاضی بےساختہ رونے لگا، پھراس نے بوڑھے باپ سے کہا: اللہ کی قسم اگر آپ پہلے مجھے اس حقیقت سے اگاہ کرتے تو میں اس کو جیل بھیجتا اور کوڑے لگواتا

 بوڑھے باپ نے مسکراتے ہوئے کہا: قاضی صاحب! آپ کا یہ حکم میرے دل کو بہت تکلیف دیتا


سبق: کاش اولاد جانتی کہ والدین کی دلوں میں اولاد کیلیے کتنی محبت ہے۔۔۔ جاگیے اس سے پہلے کہ دیر ہوجائے 


ایک عربی پوسٹ کا ترجمہ

تبصرے

اس بلاگ سے مقبول پوسٹس

عہد بہمنیہ میں اُردو شاعری، ڈاکٹر سید چندا حسینی اکبر، گلبرگہ نیورسٹی گلبرگہ Urdu poetry in the Bahmani period

  عہد بہمنیہ میں اُردو شاعری  Urdu poetry in the Bahmani period                                                                                                 ڈاکٹر سید چندا حسینی اکبرؔ 9844707960   Dr. Syed Chanda Hussaini Akber Lecturer, Dept of Urdu, GUK              ریاست کرناٹک میں شہر گلبرگہ کو علمی و ادبی حیثیت سے ایک منفرد مقام حاصل ہے۔ جب ١٣٤٧ء میں حسن گنگو بہمنی نے سلطنت بہمیہ کی بنیاد رکھی تو اس شہر کو اپنا پائیہ تخت بنایا۔ اس لئے ہندوستان کی تاریخ میں اس شہر کی اپنی ایک انفرادیت ہے۔ گلبرگہ نہ صرف صوفیا کرام کا مسکن رہاہے بلکہ گنگاجمنی تہذیب اور شعروادب کا گہوارہ بھی رہاہے۔ جنوبی ہند کی تاریخ میں سرزمین گلبرگہ کو ہی یہ اولین اعزاز حاصل ہے کہ یہاں سے دین حق، نسان دوستی، مذہبی رواداری اور ایک مشترکہ تہذیب و تمدن کے آغاز کا سہرا بھی اسی کے سر ہے . ۔   Urdu poetry in the Bahmani period

فیض کے شعری مجموعوں کا اجمالی جائزہ

: محمدی بیگم، ریسرچ اسکالر،  شعبہ اردو و فارسی،گلبرگہ یونیورسٹی، گلبرگہ ’’نسخہ ہائے وفا‘‘ کو فیض کے مکمل کلیات قرار دیا جاسکتا ہے، جس میں ان کا سارا کلام اور سارے شعری مجموعوں کو یکجا کردیا گیا ہے، بلکہ ان کے آخری شعری مجموعہ ’’ مرے دل مرے مسافر‘‘ کے بعد کا کلام بھی اس میں شامل ہے۔  فیض ؔ کے شعری مجموعوں کی کُل تعداد ’’سات ‘‘ ہے، جن کے نام حسبِ ذیل ہیں:

اداریہ

  آداب !                   اُمید کہ آپ تمام خیریت سے ہوں گے۔ کورونا کی تیسری لہر کا خطرہ بھی ٹلتا ہوا نظر آرہاہے۔ زندگی کی گاڑی پٹری پر آتی ہوئی نظر آرہی ہے۔ اللہ کرے کہ ایسا ہی ہو۔ خیر یہ کورونا کی لہر یا کورونا کا بنایا ہوا جال تو دو سال سے چل رہاہے۔ لیکن کیا ہم صحت کو لے کر پہلے پریشان نہیں تھے؟ ہمارے گھروں میں ہمارے خاندانوں میں بیماریوں کا بھنڈار پڑا ہے۔ ہر کسی کو کچھ نا کچھ بیماری ہے۔ سردرد جیسے چھوٹی بیماری سے لے کر کینسر جیسے جان لیوا امراض   تک ہمارے خاندانوں میں ضرور پائے جاتی ہے۔                   عزیزان من!   کیا آپ نے سوچا ہے کہ یہ سب کیوں ہورہاہے۔اگر ہم   ہمارے آبا و اجداد کی زندگی پر نظر ڈالیں تو ہمیں کوئی بیماری نظر نہیں آتی۔ چند ایک کو چھوڑ کر جن کی عمریں زیادہ ہوئیں تھیں وہ بھی زیادہ بیڑی کا استعمال کرنے والوں کو پھیپھروں کا کچھ مسئلہ رہتا تھا وہ بھی جان لیوا نہیں ہوا کرتا تھا۔ بس زیادہ سے زیادہ کھانستے رہتے تھے۔ اور آخری دم تک کھانستے ہی رہتے تھے۔ ان کی عمریں سو یا سو کے آس پاس ہوا کرتی تھی۔                   کبھی کسی کو دل کا دورہ نہیں ہوا کرتا تھا اور